مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تعلیمی اداروں کو 15 ستمبر سے مرحلہ وار کھولنے کا ختمی فیصلہ

وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کے مطابق وفاقی حکومت نے 15 ستمبر سے  مرحلہ وار ملک کے تعلیمی ادارے کھولنے کا فیصلہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق 15 ستمبر کو یونیورسٹیاں ، کالج اور 9-12 کلاس دوبارہ شروع ہو گی جبکہ کلاسز 6-8 دوبارہ جائزے کے بعد 23 ستمبر سے شروع ہو سکیں گی تاہم آخری مرحلے میں پرائمری اسکول 30 ستمبر کو دوبارہ کھولے جائیں گے۔ ایک کلاس میں 50 پرسنٹ طلبہ کو بٹھانے کی اجازت ہو گی جو بچے ایک دن آئیں گے دوسرے دن ان کی چھٹی ہو گی۔

بین الصوبائی وزیر تعلیم کانفرنس (آئی پی ای ایم سی) کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا کہ پہلے مرحلے میں ، یونیورسٹیوں ، کالجوں ، پیشہ ورانہ اداروں کے ساتھ ساتھ کلاس نو سے شروع ہونے والے تمام اعلی تعلیمی اداروں کا آغاز 15 ستمبر سے ہوگا۔ ایک ہفتے بعد ، 23 ستمبر کو کلاس چھ ، سات اور آٹھ کو کورونا جائزے کے بعد اسکولوں میں واپس جانے کی اجازت دی جائے گی ، جبکہ آخری مرحلے میں پرائمری اسکول 30 ستمبر کو دوبارہ کھولے جائیں گے۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ اگر معاملات ٹھیک رہے تو ہم 15 دن میں یہ تمام ادارے کھول دیں گے۔

شفقت محمود نے مزید کہا کہ آج کا دن ایک “اہم” دن تھا کیونکہ حکومت تمام تعلیمی اداروں کو دوبارہ کھولنے سے پہلے کوویڈ19 کی صورتحال میں بہتری لانے کا انتظار کر رہی تھی۔ انہوں نے کہا کہ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر (این سی او سی) نے تحقیقات کیں اور ماہر پینلز ، تھنک ٹینک وغیرہ پر مشتمل ایک “وسیع مشورتی عمل” شروع کیا گیا ، جس میں حکومت نے فیصلے تک پہنچنے سے پہلے بین الاقوامی اور علاقائی رجحانات کو دیکھا۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک بہت بڑا فیصلہ ہے۔ وزیر تعلیم نے والدین اور طلبہ کا شکریہ ادا کیا کہ وہ گذشتہ مہینوں کو صبر و تحمل کے ساتھ انتظار کرتے اور گزارتے رہے۔ وہ مشکل وقت تھا لیکن سب نے صبر کیا۔

یاد رہے کہ تعلیمی اداروں میں بچوں اساتذہ اور دیگر سٹاف پر ایس او پیز پر عمل کرنا لازم قرار دے دیا گیا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔