تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ وفات پا گئے، نماز جنازہ کا اعلان کر دیا گیا

ممتاز سکالر اور تحریک لیبک پاکستان (ٹی ایل پی) کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی صاحب مختصر بخار کے بعد جمعرات کی رات ایک مقامی اسپتال میں انتقال کر گئے ہیں۔ ٹی ایل پی زرائع کے مطابق ان کی نماز جنازہ بروز ہفتہ مینار پاکستان لاہور میں دن 10 بجے ادا کی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق 55 سالہ خادم رضوی اپنے پیچھے ایک بیوہ ، دو بیٹے اور دو بیٹیاں چھوڑ گئے ہیں۔ 

علامہ رضوی کے معاونین نے بتایا کہ وہ پچھلے کچھ دنوں سے بخار میں مبتلا تھے جس نے واضح طور پر 14 نومبر سے 16 نومبر تک فیض آباد میں اپنے دو روزہ دھرنے کے دوران شدت اختیار کی۔ 

گزشتہ جمعہ کی شب علامہ خادم حسین رضوی کی حالت اچانک خراب ہوگئی اور وہ شام کو بے ہوش ہوگئے۔ انہیں شیخ زید اسپتال لے جایا گیا اور اسپتال ذرائع کے مطابق ایمرجنسی وارڈ میں پہنچنے کے بعد انہیں مردہ قرار دے دیا گیا۔ 

یہ بھی پڑھیں | سائرا یوسف اور شہریار منور کا تازہ ترین فوٹو شوٹ انٹرنیٹ پر وائرل

علامہ صاحب کی زندگی پر نظر دوڑائیں تو انہوں نے واضح شہریت تب حاصل کی جب انہوں نے حضور (صلی اللہ علیہ وسلم) کی ختم نبوت معاملے میں فیض آباد دھرنا دیا جب کہ مسلم لیگ (ن) کی حکومت  تھی۔ اس سے قبل ممتاز قادری کی رہائی کے لئے بھی تحریک چلائی تھی۔

 اپنے سخت لہجے اور سخت الفاظ کے انتخاب کے ساتھ ، وہ اہلسنت مکتب فکر کے مقبول ترین رہنما اس وقت بنے جب انہوں نے ختم نبوت کے مقصد کے لئے درپیش چیلنجوں کا مقابلہ کرتے ہوئے بہت سارے مظاہرے اور دھرنے دیئے۔ 

 چار سال قبل ملک کی سیاست میں علامہ رض کے اچانک اضافے نے سیاست کو ہلا کر رکھ دیا ، کیونکہ اہل سنت آبادی کی ایک بڑی اکثریت ، جو توہین رسالت کے معاملے پر حکومتی پالیسیوں کے مخالف تھی ، نے ان کی پیروی کی۔ 

اس کا فائدہ ان کی پارٹی ٹی ایل پی کو 2018 کے انتخابات میں ہوا جب یہ ووٹوں کے لحاظ سے پانچویں بڑی جماعت بن گئی جب کہ اس نے 2.2 ملین سے زیادہ ووٹ حاصل کیے۔ ٹی ایل پی کی ابتداء ایک مذہبی ، غیر سیاسی تنظیم کے طور پر کی گئی تھی لیکن اسے 2018 کے انتخابات سے قبل ایک سیاسی جماعت میں تبدیل کردیا گیا تھا۔

علامہ خادم حسین رضوی  22 جون 1966 کو اٹک ضلع کے گاؤں نکاں کلاں میں پیدا ہوئےاور  خادم حسین رضوی نے پنڈی اور جہلم کے مختلف مدارس سے لاہور میں سکونت اختیار کرنے اور جامعہ نظامیہ رضویہ سے درس نظامی کی تعلیم مکمل کرنے سے قبل اپنی بنیادی تعلیم حاصل کی۔ بعد میں انہوں نے اسی مدرسہ میں تدریس کا آغاز کیا اس کے علاوہ حدیث ، عربی گرائمر ، منطق اور دیگر مضامین میں بھی مہارت حاصل کی۔ نوے کی دہائی کے وسط میں سڑک حادثے کے نتیجے میں وہ معزور ہو گئے۔ اس کے بعد سے وہ ہمیشہ ہی وہیل چیئر پر موجود رہے۔ 

متعدد سیاسی و مذہبی رہنماؤں نے ان کی اچانک موت پر دکھ کا اظہار کیا اور اہل خانہ سے تعزیت کی۔ 

وزیر اعظم عمران خان نے ٹویٹ میں مولانا خادم حسین رضوی کے انتقال کے بعد ان کے اہل خانہ سے تعزیت اور افسوس کا اظہار کیا گیا۔

اسی طرح جنرل قمر جاوید باجوہ سمیت دیگر سیاسی و مذہبی شخصیات نے ان کے اہل خانہ سے تعزیت کی۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *