بھارت: قرضوں میں دبے تلے شخص کی مکان بیچنے سے کچھ گھنٹے پہلے لاٹری نکل آئی

یہ ایک حیرت انگیز تھا جب محمد باوا کے دوست نے اسے کوئی غیر متوقع لیکن خوشخبری دینے کے لیے فون کیا۔

ایک لاٹری میں 10 ملین روپے جیتے

 دوست نے اسے بتایا کہ اس نے ایک لاٹری میں 10 ملین روپے جیتے ہیں جسے وہ تقریباً ایک سال سے جیتنے کی کوشش کر رہا تھا۔

 یہ 25 جولائی کی بات ہے۔ چار دن بعد، مسٹر باوا جنوبی ریاست کیرالہ میں اپنے آبائی شہر کاسرگوڈ میں ایک مشہور شخصیت بن گئے ہیں۔ 

زیادہ تر ہندوستانی ریاستوں میں لاٹری بڑی حد تک غیر قانونی ہے لیکن کیرالہ سمیت چند مٹھی بھر لوگ اس کی سخت نگرانی اور ضوابط کے تحت اجازت دیتے ہیں۔ 

مسٹر باوا کے لیے لاٹری اس سے بہتر وقت پر نہیں مل سکتی تھی کہ جب وہ بڑے قرضوں کی ادائیگی کے لئے اپنا گھر بیچنے کے لئے بیانہ لینے جا رہا تھا۔

 باوا خاندان نے قرض کی ادائیگی کے لیے اپنا مکان بیچنے کا فیصلہ کیا تھا۔ کال آنے سے چند گھنٹے پہلے، مسٹر باوا نے اپنا مکان بیچنے کے لیے ایک خریدار کے ساتھ تقریباً ڈیل کر لی تھی۔ 

پچیس جولائی کو، وہ اپنے گھر کی فروخت کی تصدیق اور پیشگی ادائیگی قبول کرنے کے لیے شام 5.30 بجے ایک ممکنہ خریدار سے ملنا تھا۔

یہ بھی پڑھیں | انڈونیشیاء میں سات سالہ مہنگائی کا ریکارڈ ٹوٹ گیا

یہ بھی پڑھیں | امریکہ میں منکی پاکس کے 5 ہزار کیس رپورٹ، نیو یارک میں ہیلتھ ایمرجنسی کا اعلان 

 لیکن قسمت کو کچھ اور منظور تھا اور اسے آج بھی وہ لمحہ یاد ہے جب اس کے دوست گنیش نے اسے فون کیا۔ 

دوپہر 3.20 بجے، اسے لاٹری کے نتائج کے بارے میں گنیش کی طرف سے واٹس ایپ پیغام ملا۔ اس کی کال آئی۔

 مسٹر باوا نے بتایا کہ “مجھے بہت سکون ملا۔ میرے پاس مدد کرنے والے لوگ ختم ہو گئے تھے۔ ہمارے پاس اپنے جذبات کو بیان کرنے کے لیے الفاظ نہیں ہیں۔

 ٹیکس کے بعد مسٹر باوا کو 6.3 ملین روپے ملنے کی امید ہے۔ یہ واضح نہیں ہے کہ وہ رقم کب حاصل کر پائے گا۔ لیکن وہ اب پریشان نہیں ہے کیونکہ قرض دہندگان نے اس کے دروازے پر دستک دینا بند کر دیا ہے۔ 

 انہوں نے کہا کہ میرے جیتنے کے بعد مقروض خاموش ہو گئے ہیں۔ لوگ پیسے کے لیے شور مچاتے ہیں لیکن ایک بار جب انہیں معلوم ہو گیا کہ آخر کار میرے پاس ان کی واپسی کے لیے رقم ہے تو معاملات پرسکون ہو گئے ہیں۔

باوا کبھی قرض سے پاک متوسط ​​خاندان کا فرد تھا۔ مسٹر باوا تعمیراتی شعبے میں ٹھیکیدار کے طور پر کام کرتے تھے لیکن پچھلے کچھ سالوں میں کام ختم ہونا شروع ہو گیا تھا۔ 2020 کے اوائل میں کوویڈ19  نے ہندوستان اور دنیا کو متاثر کرنے کے بعد ہی حالات مزید خراب ہوئے۔ 

اس دوران قرض لے کر اس نے خاندان کی مالی مدد جاری رکھی۔ اس کے پانچ بچے ہیں جن میں سے دو کی حال ہی میں شادی ہوئی ہے۔ مسٹر باوا نے شادی کے لیے بھی قرض لیا جس سے ان کی مالی پریشانی مزید بڑھ گئی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں