بھارتی سپریم کورٹ نے انڈیا میں مذہبی فسادات کا ذمہ دار نوپور شرما کو قرار دے دیا

انڈیا میں مذہبی فسادات

بھارتی سپریم کورٹ نے جمعہ کو بی جے پی کی معطل ترجمان نوپور شرما کو انڈیا میں مذہبی فسادات کا ذمہ دار قرار دیا اور کہا کہ ادے پور میں ایک درزی کا قتل ہونے والے افسوسناک واقعہ کی ذمہ دار نوپور شرما ہے۔ 

 عدالت عظمیٰ نے بی جے پی کے معطل رہنما پر مزید کہا کہ اس نے ڈھیلی زبان نے پورے ملک کو آگ لگا دی ہے اور ملک میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کے لیے وہ اکیلے ہی ذمہ دار ہیں اور کہا کہ انہیں پورے ملک سے معافی مانگنی چاہیے۔ 

 جسٹس سوریہ کانت اور جے بی پاردی والا کی بنچ نے شرما کو ایک ٹی وی نیوز چینل کی بحث کے دوران دیے گئے ان کے بیان پر تنقید کا نشانہ بنایا اور ادے پور واقعے کا حوالہ دیتے ہوئے، جہاں دو افراد نے ایک درزی کا قتل کیا، کہا، “یہ جو غم و غصہ ہے اس کی ذمہ دار نوپور شرما ہیں” 

نوپور شرما کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہ ان کے خلاف کئی ریاستوں میں ان کے خلاف درج تمام ایف آئی آرز کو ان کے پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں مبینہ ریمارکس کے لیے تحقیقات کے لیے دہلی منتقل کیا جائے، بنچ نے ان کے وکیل منیندر سنگھ سے کہا کہ نہیں مسٹر سنگھ، عدالت کا ضمیر مطمئن نہیں۔ ہم قانون کو اس کے مطابق نہیں ڈھال سکتے۔

 سینئر وکیل منیندر سنگھ نے نوپور شرما کی طرف سے پیش ہونے کے بعد عرضی واپس لے لی۔

یہ بھی پڑھیں | بھارت: مودی حکومت کے ناقد فیکٹ چیک ویب سائٹ چلانے والا شخص گرفتار 

یہ بھی پڑھیں | سعودی شہزادہ اور طیب اردگان کی ترکی میں ملاقات  

سماعت کے دوران، جب مسٹر سنگھ نے بنچ سے کہا کہ نوپور شرما کو اپنی جان کو خطرہ ہے تو جسٹس سوریہ کانت نے کہا کہ انہیں خطرہ ہے یا وہ سیکورٹی کے لیے خطرہ بن گئی ہیں؟جس طرح اس نے پورے ملک میں جذبات کو بھڑکا دیا ہے۔

 بنچ نے کہا کہ ملک میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کے لیے یہ خاتون اکیلے ہی ذمہ دار ہے۔ یہ شرمناک ہے۔ اسے پورے ملک سے معافی مانگنی چاہیے۔

  سینئر وکیل نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ نوپور شرما نے ریمارکس کے لیے معذرت کی ہے اور تبصرے واپس لے لیے ہیں۔ اس پر بنچ نے کہا کہ وہ معافی مانگنے اور بیان واپس لینے میں بہت دیر کر چکی ہے۔ 

 جسٹس کانت نے کہا کہ انہیں ٹی وی پر آنا چاہیے اور قوم سے معافی مانگنی چاہیے تھی۔ 

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔