مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

برما (میانمار) میں فوج نے حکومت کا تختہ الٹ دیا

میانمار کی فوج نے آج پیر کے دن میانمار کی حکومت کے خلاف بغاوت کر کے اقتدار پر قبضہ کر لیا ہے- جمہوری طور پر منتخب رہنما آنگ سان سوچی کو حراست میں لے لے کر ایک سال کے لئے ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔

 اس مداخلت سے میانمار میں سو سال کی شہری حکمرانی کا خاتمہ ہوا ہے جبکہ فوج کی جانب سے نومبر میں ہونے والے انتخابات میں دھوکہ دہی کا الزام لگا کر اس کے اقتدار پر قبضے کا جواز پیش کیا گیا۔

 اس بغاوت کے بعد عالمی سطح پر مذمت کا اظہار کیا جا رہا ہے جبکہ امریکہ نے جمہوریت کو فوری طور پر بحال کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ 

پارٹی کے ترجمان میو نیونٹ نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ سو چی اور صدر ون مائنٹ کو صبح سویرے سے قبل دارالحکومت نیپائڈاو میں حراست میں لیا گیا تھا جبکہ آج انتخابات کے بعد پارلیمنٹ کا پہلی بار دوبارہ اجلاس ہونا تھا۔ فوج نے دارالحکومت کے اطراف میں سڑکوں کو مسلح دستوں ، ٹرکوں اور بکتر بند اہلکاروں کیریئر سے بند کردیا۔ فوجی ہیلی کاپٹر پورے شہر میں اڑتے پائے گئے۔

 اس کے بعد فوج نے اپنے ہی ٹیلی ویژن چینل کے ذریعہ ایک سال کی ہنگامی حالت کا اعلان کیا اور اعلان کیا کہ سابق جنرل مائنٹ سوی اگلے سال کے لئے قائم مقام صدر رہیں گے۔ انہوں نے نومبر کے انتخابات میں “بڑی بے ضابطگیوں” کا الزام عائد کیا تھا جسے الیکشن کمیشن حل کرنے میں ناکام رہا تھا۔ 

یہ بھی پڑھیں | امریکی صحافی ڈینئل پرل کے قتل کا مرکزی ملزم رہا

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ چونکہ صورتحال کو قانون کے مطابق حل ہونا ضروری ہے لہذا ہنگامی صورتحال کا اعلان کیا گیا ہے۔ فوج نے بعد میں ایک سال طویل ہنگامی صورتحال کے بعد تازہ انتخابات کرانے کا وعدہ کیا ہے۔ فوج کے سرکاری فیس بک پیج پر ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم مکمل توازن اور انصاف کے ساتھ حقیقی کثیر الجماعتی جمہوریت قائم کریں گے۔

 اپنی پارٹی کے چیئرپرسن کے سرکاری فیس بک پیج پر ایک پوسٹ کے مطابق ، سوچی نے اپنی حراست سے قبل ایک اہم بیان جاری کیا تھا جس سے لوگوں سے “بغاوت قبول نہیں کرنے” کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ فوج نے عدم اعتماد کو دور کرنے کے لئے تیزی سے پورے ملک میں انٹرنیٹ اور موبائل فون مواصلات پر سختی سے پابندی عائد کردی۔ 

یہ بھی پڑھیں | علاقائی استحکام کے لئے پاکستان کی امریکہ سے گہری دوستی کی خواہش

نجی صحافی کے مطابق ، میانمار کے تجارتی سابق دارالحکومت ینگون میں ، فوجیوں نے اس اعلان سے بالکل پہلے ہی سٹی ہال پر قبضہ کرلیا۔  لوگوں نے بتایا کہ سیکیورٹی فورسز نے انہیں گھر پر ہی رہنے کا حکم دیا ہے۔ 

 وائٹ ہاؤس کے ترجمان جین ساکی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ امریکہ حالیہ انتخابات کے نتائج میں ردوبدل کرنے یا میانمار کی جمہوری منتقلی میں رکاوٹ پیدا کرنے کی کسی بھی کوشش کی مخالفت کرتا ہے اور اگر ان اقدامات کو واپس نا لیا گیا تو ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کرے گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔