بجلی 3.5 فی یونٹ کے حساب سے ایک بار پھر مہنگی کر دی گئی

بنیادی بجلی کے نرخوں میں تین مرحلوں میں اضافے کا اعلان کیا

حکومت نے منگل کے روز یکساں بنیادی بجلی کے نرخوں میں تین مرحلوں میں اضافے کا اعلان کیا ہے جو 26 جولائی سے 3.50 روپے فی یونٹ سے شروع ہو کر رواں مالی سال کے دوران کم از کم 900 ارب روپے کے فنڈز پیدا کرے گا اور آئی ایم ایف سے بیل آؤٹ حاصل کرے گا۔ 

 وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک کے ساتھ نیوز کانفرنس کرتے ہوئے وزیر بجلی خرم دستگیر خان نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے ‘ٹیرف ری بیسنگ’ کی منظوری دی تھی جس کے تحت 3.50 روپے فی یونٹ کا دوسرا مرحلہ اگلے ماہ سے نافذ العمل ہو جائے گا۔

 ستمبر میں ایک ماہ کے وقفے کے بعد باقی 91 پیسے فی یونٹ اضافہ اکتوبر میں نافذ العمل ہوگا۔ 

 انہوں نے کہا کہ 7.91 روپے فی یونٹ پر مشتمل ٹیرف ری بیسنگ کا نفاذ فروری میں ہونا چاہیے تھا کیونکہ پچھلی ری بیسنگ فروری 2021 میں نافذ کی گئی تھی لیکن پچھلی حکومت نے سیاسی وجوہات کی بنا پر اس میں تاخیر کی۔ 

روپے فی یونٹ سے بڑھ کر 24.82 روپے

اس 7.91 روپے فی یونٹ کے اس اضافے کے ساتھ، بنیادی قومی اوسط بجلی کا ٹیرف 16.91 روپے فی یونٹ سے بڑھ کر 24.82 روپے ہو جائے گا جس کے مالیاتی اثرات مالی سال 2022-23 میں 893 ارب روپے کے علاوہ اضافی سیلز ٹیکس کی مد میں 150 ارب روپے سے زیادہ ہوں گے۔

یہ بھی پڑھیں | پرویز الہی نے وزیر اعلی پنجاب کے طور پر حلف اٹھا لیا

یہ بھی پڑھیں | حکومت کا لگژری اشیاء پر پابندی ہٹانے کا فیصلہ 

 مسٹر دستگیر نے کہا کہ جب ری بیسنگ کا عمل مکمل ہو جائے گا اور موجودہ حکومت کی طرف سے اٹھائے جانے والے اقدامات کے نتائج برآمد ہونے لگیں گے تو نومبر دسمبر میں بجلی کے نرخ کم ہونا شروع ہو جائیں گے۔ 

 یہاں تک کہ اس ٹیرف ایڈجسٹمنٹ کے ساتھ، حکومت تقریباً 45 فیصد آبادی یا 13 ملین گھریلو کنکشن (27 ملین گھریلو صارفین میں سے) کو ماہانہ 200 یونٹس تک ماہانہ استعمال کے ساتھ ریلیف فراہم کرے گی۔

 بلاتعطل بجلی کی فراہمی

 وزیر نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ وقف صنعتی فیڈرز کو چوبیس گھنٹے بجلی کی بلاتعطل فراہمی کو یقینی بنایا جائے اور مکس (صنعتی اور گھریلو) فیڈرز پر رکاوٹوں کو کم کیا جائے تاکہ ملازمتیں اور معاشی سرگرمیاں متاثر نہ ہوں۔ 

اسی طرح، کابینہ نے پانچ برآمدی شعبوں کو ترجیحی بنیادوں پر بجلی اور گیس کی فراہمی کو یقینی بنانے اور ان کے ٹیرف کو علاقائی برآمدی حریفوں کے قریب رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔