مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

این اے 249 کا معرکہ کون جیتے گا؟

کراچی کے بلدیہ ٹاؤن علاقے میں  بچوں سے لیکر بزرگ تک این اے 249 کے معرکے کے نتائج کے انتظار میں ہیں۔

این اے 249 حلقے کے چاروں طرف ، اسکولوں ، پارکوں اور کھیلوں کے میدانوں کی باقیات باقی ہیں جو ٹوٹی ہوئی باؤنڈری والز کے ساتھ لگتی ہیں جو کچرے کے ڈھیروں سے بھری ہوئی ہیں۔

حلقہ این اے 249 میں پانی کی دستیابی کا مسئلہ اس وسیع حلقے میں رہنے والے لگ بھگ 800،000 افراد کے لئے پریشان کن تشویش بنی ہوئی ہے جس میں بلدیہ ٹاؤن ، اتحاد ٹاؤن ، مہاجر کیمپ ، سعید آباد ، رشید آباد ، اورنگی ٹاؤن اور قائمخانی کالونی شامل ہیں۔

 پانی کا مسئلہ امیدواروں کے ذریعہ کئے گئے تعلیم اور صحت کی سہولیات کی بحالی سمیت وعدوں کی سربلندی پر غلبہ رکھتا ہے کیونکہ یہ نظرانداز شدہ علاقہ ایک ضمنی انتخاب کے لئے سیاسی میدان جنگ میں تبدیل ہو گیا ہے جو آج (جمعرات) کو ہوگا۔ 

تفصیلات کے مطابق یہ قومی اسمبلی کی نشست پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے فیصل واوڈا کے استعفیٰ کے بعد خالی ہوگئی تھی جس نے پاکستان مسلم لیگ ن کو بہت کم ووٹوں کے مارجن سے انتخابات میں شکست دی تھی۔

 اس حلقے میں فیصل واوڈا کی کارکردگی نے تحریک انصاف کے ووٹ بینک کو بری طرح متاثر کیا ہے۔ 

ایک مقامی نے نجی نیوز کو بتایا کہ اس نے ہمیں بوتل کے پانی کی پیش کش کی جب ہم نے اس کی نشاندہی کی کہ ہمارے نلکے خشک ہو رہے ہیں۔ اس وقت کے وزیر نے اپنے دور حکومت میں صرف تین بار اس علاقے کا دورہ کیا۔

 پی ٹی آئی کے موجودہ امیدوار امجد آفریدی ہیں ، جو ایک مقامی تاجر ہیں جن کے نام ایک کامیاب سیاسی مہم ہے اور اس کا نام بہت کم ہے۔ تاہم تحریک انصاف نے مقامی شخص کو ٹکٹ دے کر ایک اچھا فیصلہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | آج ملک بھر کے بڑے شہروں میں ممکنہ طور پر مکمل لاک ڈاؤن لگ سکتا ہے

 پاکستان مسلم لیگ ن کے مفتاح اسماعیل ایک مضبوط امیدوار ہیں کیونکہ اس علاقے میں ایک آبادء پنجابی بولنے والوں کی ہے جبکہ یہ جماعت کشمیریوں اور سرائیکی بولنے والوں میں بھی مقبول ہے۔ 

لیکن پارٹی کی نائب صدر مریم نواز کا کوویڈ19 کے خدشات کے سبب اس حلقے کا اپنا دورہ منسوخ کرنے کے بعد سابق وزیر خزانہ کی انتخابی مہم ممکنہ طور پر ختم ہوگئی۔ 

اسی حلقے این اے 249 مین مصطفی کمال پی ایس پی کے رہنما نے ایک کامیاب مہم چلائی جو ایک اچھے خاصے ووٹ لے سکتی ہے بلکہ کچھ سروے سے معلوم ہوا ہے کہ پی ایس پی کے مصطفی کمال حلقہ این اے 249 میں ایک اچھی خاصی مقبولیت رکھتے ہیں۔

حال ہی میں کالعدم ہونے والی جماعت تحریک لبیک پاکستان اس حلقے کے نتائج کے اعتبار سے سرپرائز دے سکتی ہے جبکہ اس جماعت نے 2018 کے الیکشن میں تیسرے نمبر پر زیادہ ووٹ حاصل کئے تھے۔ تاہم سنی تحریک کے امیدوار لبیک کے ووٹ کو تقسیم کر سکتے ہیِں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔