ایف بی آر نے پی آئی اے کا بینک پہلے معطل اور پھر غیر معطل کیوں کیا؟

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے منگل کو ہوائی ٹکٹوں پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (ایف ای ڈی) کی عدم ادائیگی پر پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز (پی آئی اے) کے بینک اکاؤنٹس کو منجمد کردیا تھا، تاہم بعد ازاں واجبات کی جلد ادائیگی کی یقین دہانی کے بعد انہیں بحال کردیا گی ہے۔ 

 تفصیلات کے مطابق پی آئی اے کو فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کی مد میں 4.5 بلین روپے ادا کرنے تھے جو کہ وہ اپنے مسافروں سے گزشتہ دو سالوں سے ٹکٹوں پر وصول کر رہی ہے۔ 

 ریکوری کے لیے پی آئی اے کے کل 50 اکاؤنٹس منجمد کیے گئے۔ 

 ذرائع نے بتایا کہ ایف بی آر نے اب تک 465 ملین روپے کی وصولی کی ہے اور مزید 4.135 ارب روپے کی وصولی تک اکاؤنٹس منجمد رہیں گے۔ 

تاہم ذرائع کے مطابق چیئرمین ایف بی آر ڈاکٹر اشفاق احمد اور سی ای او پی آئی اے ارشد ملک کے درمیان ملاقات کے بعد پی آئی اے کے اکاؤنٹس بحال کر دیے گئے۔

ایف بی آر کے ترجمان اسد طاہر نے کہا کہ بقایا رقم کی جلد ادائیگی کے وعدے پر اکاؤنٹس کو بحال کر دیا گیا ہے۔

 اس سے قبل پی آئی اے کے ترجمان عبداللہ حفیظ نے کہا کہ کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے پی آئی اے کے اصلاحاتی عمل کی تکمیل تک 2016 سے 2020 تک پی آئی اے کی ٹیکس ادائیگیوں کو منجمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | پی ٹی اے نے موبائل فونز پر ٹیکس سے متعلق غلط فہمی دور کر دی

 انہوں نے کہا کہ وفاقی کابینہ کے فیصلے کے برعکس ایف بی آر کی جانب سے پی آئی اے کے اکاؤنٹس منجمد کرنے کا فیصلہ پی آئی اے کے امیج کو خراب کرنے کے مترادف ہے۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ یہ دنیا بھر میں قومی پرچم بردار کی تصویر کو بھی خراب کرے گی۔

 انہوں نے کہا کہ پی آئی اے نے 2021 میں کوویڈ کے باوجود ایف بی آر کو 4.7 بلین روپے ادا کیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ 2021 کے دیگر تمام بقایا جات جنوری 2022 میں ادا کیے جانے کے عمل میں تھے۔ 

 انہوں نے کہا کہ پی آئی اے ایک قومی ادارہ ہے اور حکومت پاکستان کی ملکیت کے باوجود ایسا قدم اٹھانا سمجھ سے باہر ہے۔ 

 گزشتہ سال حکومت نے خسارے میں جانے والے ادارے کو ایک قابل عمل کاروبار بنانے کی کوشش میں پی آئی اے کے لیے تنظیم نو کے منصوبے کی منظوری دی تھی۔ اس میں اضافی افرادی قوت کو فارغ کرنا بھی شامل تھا۔ 

 ایئر لائن نے 2017 میں اپنی افرادی قوت 550 فی ہوائی جہاز سے کم کر کے فی طیارہ 260 کر دی ہے۔ اس کا مقصد افرادی قوت کو بین الاقوامی معیار کے اندر 2022 میں 220 افراد فی ہوائی جہاز تک لانا ہے۔ 

 اصلاحات کے عمل کے ایک حصے کے طور پر، اقتصادی رابطہ کمیٹی نے 20-2016 کی مدت کے لیے پی آئی اے کے ٹیکس واجبات کو موخر کر دیا تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں