مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) نے جمعہ کے روز اعلان کیا ہے کہ پاکستان کا نام گرے لسٹ میں برقرار رہے گا۔ 

ایف اے ٹی ایف کے صدر ڈاکٹر مارکس پلیر نے 21 سے 23 اکتوبر تک اپنے تین روزہ اجلاس کے دوران پلینری کے ذریعے لیئے گئے فیصلوں کا اعلان کرنے کے لئے ویبنار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فورم نے فیصلہ کیا ہے کہ  پاکستان کو ٹاسک پورے کرنے کے لئے مزید کام کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ تسلیم کیا گیا ہے کہ پاکستان کے لئے پیش کی جانے والی 27 شرائط میں سے 21 کو پاکستان نے پورا کیا گیا ہے۔ 

ایک سوال کے جواب میں ڈاکٹر پلیئر نے کہا کہ ایک بار جب باقی چھ شرائط پوری ہوجائیں گی ، تو آن سائٹ دورے کی منظوری دی جائے گی جس کے تحت ایف اے ٹی ایف کی ایک ٹیم آئندہ جائزہ کے لئے ملک کا دورہ کرے گی۔

مزید پڑھئے | ایف اے ٹی ایف سے متعلقہ تینوں بل پارلیمنٹ میں منظور، اپوزیشن کا واک آؤٹ

تفصیلات کے مطابق ممبران نے اتفاق رائے سے فیصلہ کیا کہ پاکستان کو ان چھ اشیاء کو آن سائٹ دورے کے لئے مکمل کرنے کی ضرورت ہے۔ جیسے ہی یہ فیصلہ ہوگا کہ پاکستان نے تمام 27 آئٹمز کو مکمل کرلیا ہے ، تب ہی آن سائٹ دورہ کیا جائے گا۔ 

پاکستان دورے کے بعد پھر یہ فیصلہ کیا جائے گا کہ ملک کو گرے لسٹ سے باہر نکالنا ہے یا نہیں؟. انہوں نے کہا کہ بقیہ شرائط کو پورا کرنے کے لئے پاکستان کے لئے نئی آخری تاریخ فروری 2021 ہے جب آئندہ مکمل اجلاس ہوگا۔ ڈاکٹر پلیئر نے کہا کہ جب تک کہ پاکستان کو ترقی اور تقاضوں کی تکمیل کرتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے ، اسے موقع فراہم کیا جائے گا۔ کچھ ممالک ایسے بھی ہیں جو ترقی نہیں کررہے ہیں جس کی وجہ سے انہیں بلیک لسٹ میں رکھا گیا ہے۔ دریں اثنا ، دو ممالک آئس لینڈ اور منگولیا کو اس سال ایف اے ٹی ایف کی “بلیک لسٹ” سے ہٹا دیا گیا ہے۔

اس فیصلے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے وزیر صنعت و پیداوار حماد اظہر نے کہا کہ پاکستان نے اپنے ایف اے ٹی ایف کے عملی منصوبے پر “متاثر کن پیشرفت” کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 27 میں سے 21 ایکشن تاسک اب مکمل ہو چکے ہیں اور باقی 6 بھی جزوی طور پر مکمل ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایک سال کے اندر پاکستان 5/27 سے  21/27 تک پہنچ چکا ہے جو کہ خوش آئیند ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔