مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    ایف آئی اے نے بابر اعظم کے خلاف کاروائی کرنے کے احکامات جاری کر دئیے

    جمعرات کے روز ایک اضافی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج نے وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کو ہدایت کی کہ وہ پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم اور دو خواتین کے خلاف بلیک میل کرنے کے الزام اور حمزہ مختار کو دھمکیاں دینے اور ہراساں کرنے کے الزام میں ایف آئی آر درج کریں۔ 

    جج حامد حسین نے اپنے حکم میں مدعی ایف آئی اے کو ہدایت کی کہ قانونی رسمی کارروائیوں کے بعد مجرموں کے خلاف مقررہ وقت میں ایف آئی آر کے اندراج کے سلسلے میں مزید کارروائی کی جائے۔ 

    حمزہ مختار ، جنھوں نے پہلے دعوی کیا تھا کہ بابر اعظم نے اسے بلیک میل کیا تھا اور شادی کے وعدوں پر اس کی رضامندی سے بدکاری کی تھی ، بابر اعظم کے خلاف شروع کی گئی قانونی چارہ جوئی کے جواب میں اسے نامعلوم کالروں کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کے لئے شکایت درج کروائی گئی تھی۔

     اس خاتون نے دعوی کیا تھا کہ فون کرنے والوں نے بتایا تھا کہ وہ اس کی قابل اعتراض تصاویر اور ویڈیوز کے قبضے میں ہیں ، یہ کہتے ہوئے کہ سوشل میڈیا پر بھی اسے اپ لوڈ کیا جاسکتا ہے۔

    یہ بھی پڑھیں | پی ڈی ایم لانگ مارچ ملتوی، آصف زرداری کا نواز شریف کی واپسی کا مطالبہ

     انہوں نے ایف آئی اے سے درخواست کی تھی کہ وہ کال کرنے والوں کا سراغ لگائیں اور ان کے خلاف ایف آئی آر درج کریں۔ ایف آئی اے کی انکوائری کے دوران ، کال ریکارڈ سے انکشاف ہوا کہ مختار کو دو نمبر موصول ہوئے تھے جن کا تعلق اعظم اور دو خواتین سے تھا ، جن کی شناخت مریم احمد اور سلیمی بی بی کے نام سے ہوئی ہے۔

     سلیمی بی بی کو تین بار نوٹسز دینے کے باوجود وہ عدالت میں پیش نہیں ہوئے۔ دوسری ملزم مریم کے مطابق ، وہ درخواست گزار حمیزہ کو نہیں جانتی تھی اور نہ ہی اسے کوئی ایسا پیغام بھیجتی تھی۔

     اس نے جنوری میں بھی اس معاملے کی مزید تفتیش کے لئے اپنا موبائل حوالے کرنے کا وعدہ کیا تھا لیکن وہ عدالت میں پیش نہیں ہوا اور نہ ہی کوئی ڈیجیٹل ثبوت فراہم کیا۔ بعدازاں ، 18 جنوری کو ، بابر اعظم کو عدالت طلب کیا گیا ، جس پر ان کے بڑے بھائی فیصل اعظم پیش ہوئے اور معاملے کی تصدیق کے لئے کچھ وقت طلب کیا۔ 

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x