ایف آئی اے تحریک انصاف کے فارن فنڈنگ کیس کی تحقیقات کرے گی، مریم اورنگزیب

وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ وفاقی تحقیقاتی ادارہ (ایف آئی اے) پی ٹی آئی کی غیر ملکی فنڈنگ ​​کیس کی مکمل تحقیقات کرے گا۔ 

سپریم کورٹ کو اعلامیہ بھیجنے کا اصولی فیصلہ کیا

 مریم اورنگزیب نے مزید کہا کہ وفاقی کابینہ نے پی ٹی آئی کی ممنوعہ غیر ملکی فنڈنگ ​​کیس سے متعلق الیکشن کمیشن آف پاکستان کے فیصلے کا تفصیلی جائزہ لینے کے بعد سپریم کورٹ کو اعلامیہ بھیجنے کا اصولی فیصلہ کیا ہے۔ 

وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے مریم اورنگزیب نے کہا کہ وزیر داخلہ نے کابینہ کو ای سی پی کے فیصلے پر تفصیلی بریفنگ دی کہ آئین اور قانون کے مطابق اس کے بعد اعلان کیسے کیا جا سکتا ہے۔ 

 کیونکہ الیکشن کمیشن کے فیصلے میں پاکستان تحریک انصاف کو غیر ملکی امداد یافتہ جماعت ثابت کیا گیا ہے، اب حکومت نے اس پر اعلامیہ تیار کرکے سپریم کورٹ کو بھجوانے کا اصولی فیصلہ کیا ہے۔ 

 مریم اورنگزیب نے کہا کہ تین دن کا وقت دیا گیا ہے جس کے بعد وزارت قانون کابینہ کے آئندہ اجلاس میں تمام آئینی اور قانونی امور کا جائزہ لے کر اعلامیے کے لیے مواد تیار کرے گی جب کہ دور کی بات یہ ہے کہ 16 بینک اکاؤنٹس ہیں جن میں پاکستان تحریک انصاف نے یہ انکشاف نہیں کیا کہ عمران خان سمیت اپنی سینئر قیادت کے نام پر کون کون سے اکاؤنٹ کھولے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | پی ٹی آئی کا الیکشن کمیشن کے خلاف ایف نائن پارک میں احتجاج کرنے کا فیصلہ

یہ بھی پڑھیں | عمران خان کا جمعرات کو الیکشن کمیشن کے باہر احتجاج کا اعلان 

 انہوں نے مزید کہا کہ فیصلے میں دیے گئے تمام شواہد کا تفصیلی جائزہ لیا گیا جس میں واضح طور پر لکھا گیا ہے کہ پی ٹی آئی کو غیر ملکی باشندوں اور کمپنیوں سے فنڈنگ ​​ملی اور عمران خان نے الیکشن کمیشن آف پاکستان میں جھوٹا حلف نامہ جمع کرایا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے خلاف ممنوعہ فنڈنگ ​​ریفرنس اکبر ایس بابر نے دائر کیا تھا جو پی ٹی آئی کے بانی رکن تھے اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کا اس میں کوئی حصہ نہیں ہے، جب اکبر ایس بابر الیکشن کمیشن کے سامنے ثبوت پیش نہیں کر سکے تو ریاست بینک نے رپورٹ پیش کی۔

 انہوں نے مزید کہا کہ ‘ای سی پی نے یہ کیس 7 سال تک سنا اور پی ٹی آئی کو جواب جمع کرانے کا موقع دیا لیکن وہ جواب جمع کرانے میں ناکام رہے’۔ 

 مریم اورنگزیب نے کہا کہ یہ صرف عمران خان کا معاملہ نہیں ہے، یہ ایک سیاسی جماعت کا معاملہ ہے جو پولیٹیکل پارٹی آرڈیننس 2002 کے تحت رجسٹرڈ ہے، اسے غیر ملکی فنڈڈ پارٹی قرار دیا گیا ہے کیونکہ  پیسہ باہر سے آیا ہے۔ ظاہر نہیں کیا گیا اور چار ملازمین کے اکاؤنٹس میں رقم کی منتقلی پر پارٹی کے بورڈ نے دستخط کیے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں