ایاز امیر اور اس کے بیٹے  کے جسمانی ریمانڈ میں توسیع

ایاز امیر اور بیٹے کے جسمانی ریمانڈ میں توسیع

پیر کو مقامی عدالت نے سارہ انعام قتل کیس کے مرکزی ملزم شاہنواز امیر اور اس کے والد ایاز امیر کے جسمانی ریمانڈ میں توسیع کر دی ہے جنہیں مقتولہ کے اہل خانہ نے ایف آئی آر میں نامزد کیا تھا۔ 

 جوڈیشل مجسٹریٹ عامر عزیز خان نے کیس کی سماعت کی تو پولیس نے شاہنواز عامر اور ایاز امیر کو عدالت میں پیش کیا۔ 

 شاہنواز عامر کو گزشتہ ہفتے چک شہزاد میں واقع ایک فارم ہاؤس میں مبینہ طور پر اپنی اہلیہ، ایک کینیڈین شہری کو قتل کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا جہاں ملزم اپنی والدہ کے ساتھ رہتا تھا۔

ایاز امیر کو قتل کیس میں نامزد کیا گیا ہے

تفتیشی افسر (آئی او) نے عدالت کو بتایا کہ مقتول کے چچا نے ایاز امیر کو قتل کیس میں نامزد کیا ہے۔ آئی او نے کہا کہ شکایت کنندہ نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ایاز امیر بھی ایک “سازش” میں ملوث تھا جس کی وجہ سے قتل ہوا۔ پولیس افسر نے عدالت کو بتایا کہ ایاز امیر نے اپنے بیٹے شاہنواز کی سارہ انعام سے شادی کو خفیہ رکھا تھا۔ 

اسلام آباد پولیس کے انسپکٹر جنرل پولیس کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ اگرچہ ایاز عامر واقعے کے دن چکوال میں تھے، لیکن ان کا کردار اس وقت شروع ہوتا ہے جب متاثرہ لڑکی نے تین ماہ قبل اپنے بیٹے کے ساتھ شادی کی تھی۔

انہوں نے عدالت کو بتایا کہ متاثرہ کے والدین بھی ایک یا دو دن میں اسلام آباد پہنچ جائیں گے اور ان کے پاس ملزمان کے خلاف کچھ ثبوت بھی ہو سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | عمران خان آج دورہ لاہور کریں گے

یہ بھی پڑھیں | بیوی کو قتل کرنے پر صحافی ایاز میر کا بیٹا گرفتار

میں فکر مند تھا: ایاز میر

سماعت کے دوران ایاز امیر نے موقف اختیار کیا کہ وہ چکوال میں تھے جب انہیں فون پر واقعے کا علم ہوا۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ میں نے فوری طور پر اسلام آباد پولیس کے آئی جی اور ایس پی اسلام آباد (دیہی) کو فون کیا۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ میں فکر مند تھا کہ اس واقعے میں کوئی زخمی نہ ہو جائے۔

انہوں نے کہا کہ انہوں نے ایس ایچ او کو اس راستے کے بارے میں بھی بتایا جو فارم ہاؤس کی طرف جاتا ہے جہاں یہ واقعہ پیش آیا تھا۔ میرے خلاف ثبوت پیش کیے جائیں کیونکہ میں کیس میں ملزم ہوں۔ اس معاملے میں میرے خلاف کچھ نہیں ہے۔ پولیس نے میرے خلاف مقدمہ درج کیا اور میں نے کل پولیس کو اپنا بیان ریکارڈ کرایا، ایاز امیر نے عدالت کو بتایا کہ پولیس نے کل اپنا بیان ریکارڈ کرنے کے بعد سے ان سے مزید کچھ نہیں پوچھا۔ 

پولیس کی جسمانی ریمانڈ میں توسیع کی استدعا

 پولیس نے سارہ انعام قتل کیس میں تفتیش کے لیے ملزم کے سات روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی تاہم عدالت نے ایاز عامر کے ایک روزہ جسمانی ریمانڈ اور شاہنواز کے تین روزہ جسمانی ریمانڈ میں توسیع کردی ہے۔

 علاوہ ازیں ایڈیشنل سیشن جج شیخ سہیل نے شاہنواز کی والدہ ثمینہ شاہ کی 50 ہزار روپے کے ضمانتی مچلکوں کے عوض تین دن کی عبوری ضمانت منظور کرتے ہوئے پولیس کو گرفتار کرنے سے روک دیا۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔