انڈیا پاکستان سمیت جنوبی ایشیاء گرمی کی شدید لہر کی لپیٹ میں

کرہ ارض پر آٹھ میں سے تقریباً ایک شخص گرمی کی شدید لہر کو برداشت کر رہا ہے جو اپنے تیسرے ہفتے تک پھیل رہی ہے۔ 

 پاکستان اور انڈیا میں اس وقت شدید گرمی کی لہر جاری ہے جبکہ اس خطہ میں 1.5 بلین لوگوں کا گھر ہے۔ حالیہ ہفتوں میں شدید گرمی نے بنگلہ دیش اور سری لنکا کو بھی جھلسا دیا ہے۔ ہندوستان گزشتہ اپریل میں 122 سالوں میں سب سے زیادہ گرم رہا اور اس کے بعد  مارچ بھی گرم ترین رہا ہے۔

 پاکستان میں یہ 61 سالوں میں گرم ترین اپریل تھا۔ جیکب آباد، پاکستان، جو پہلے ہی دنیا کے گرم ترین شہروں میں سے ایک ہے، میں درجہ حرارت 120 ڈگری فارن ہائیٹ سے بڑھ گیا ہے۔ رات کے وقت کا درجہ حرارت 90 کی دہائی میں رہتا ہے۔ 

 شدید موسم کی وجہ سے بھارت میں کم از کم 25 اور پاکستان میں 65 افراد ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ ہلاکتوں کی اصل تعداد اس سے کہیں زیادہ ہے۔ یہاں تک کہ پرندوں کو بھی ہیٹ سٹروک ہو رہا ہے۔

گرمی کی لہر کے شدید اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ بجلی کی بڑھتی ہوئی طلب اور پاور گرڈ پر دباؤ نے دو تہائی ہندوستانی گھرانوں کے لیے بجلی کی بندش کو جنم دیا ہے۔ پاکستان میں کچھ علاقوں میں لوڈ شیڈنگ 12 گھنٹے تک جاری ہے۔ بجلی نہ ہونے سے کئی گھرانوں ک2 پانی کی کمی کا بھی سامنا ہے جبلہ چولستان میں پانی ختم ہو گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | کراچی میں ہزاروں افراد کو موسمیاتی تبدیلی اور پلازہ مسماری کے خلاف احتجاج

 گرم موسم نے دھول کی سطح میں بھی اضافہ کیا ہے جس کے نتیجے میں خطے کے بڑے شہروں میں فضائی آلودگی میں اضافہ ہوا ہے۔ 

گرمی نے پہاڑی گلیشیئرز کو معمول سے زیادہ تیزی سے پگھلا دیا ہے جس سے پاکستان میں اچانک سیلاب آ گیا ہے۔ ایک ہی وقت میں، سیاسی عدم استحکام اور کوویڈ کی وجہ سے بگڑتی ہوئی معیشت  کا معاشی نتیجہ گرمی کی لہر کے ردعمل میں مزید رکاوٹ بن رہا ہے۔ 

 جنوبی ایشیا کی گرمی کی لہر دوسرے ممالک میں پھیلنے کے لیے تیار ہے۔ بلند درجہ حرارت سے گندم کی پیداوار کو خطرہ لاحق ہو رہا ہے جو پوری دنیا میں خوراک کی پہلے سے بڑھتی ہوئی قیمتوں کو مزید بلند کر سکتا ہے۔

  محققین اب اس بات کی تحقیقات کر رہے ہیں کہ انسانی وجہ سے ہونے والی موسمیاتی تبدیلیوں نے جنوبی ایشیا میں شدید گرمی میں کتنا حصہ ڈالا ہے۔ لیکن سائنسدانوں نے طویل عرصے سے خبردار کیا ہے کہ زیادہ بار بار اور زیادہ شدید گرمی کی لہریں عالمی اوسط درجہ حرارت میں اضافے کے کچھ براہ راست نتائج ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔