امریکی کمپنی نے سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی آڈیو لیک اصلی قرار دے دی

 پاکستان  پاکستان

امریکی فرم

نے سابق چیف جسٹس ثاقب نثار سے منسوب آڈیو کلپ کا فرانزک آڈٹ کیا ہے۔ ان کے مطابق آڈیو فائل میں کسی قسم کی ایڈیٹنگ نہیں کی گئی ہے۔

 سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کے مبینہ آڈیو کلپ نے سیاسی حلقوں میں شدید بحث چھیڑ دی ہے اور اپوزیشن جماعتوں نے معاملے کی مکمل تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

 تاہم حکومت نے اسے عدلیہ کے خلاف سازش قرار دیتے ہوئے مسلم لیگ ن کی قیادت پر اداروں کے خلاف گھناؤنے ہتھکنڈے استعمال کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔ 

اس کہانی کو بریک کرنے والے صحافی احمد نورانی نے پیر کو ٹویٹ کیا کہ کسی بھی شخص کی طرف سے کہا گیا ہر ایک لفظ اس کی پچھلی تقریروں اور باتوں میں پایا جا سکتا ہے۔ میں نے ایک معتبر ادارے کی جانب سے آڈیو کی فرانزک رپورٹ جاری کی ہے۔ اسے مسترد کرنے کا واحد طریقہ یہ ہے کہ میں نے جو آڈیو جاری کیا ہے اس کی فرانزک رپورٹ سامنے لائیں اور اسے غلط ثابت کریں۔

یہ بھی پڑھیں | چین نے امریکہ کو پیچھے چھوڑ دیا؛ امیر ترین ملک بن گیا   

 اس نے ایک ویب پروگرام کو بتایا کہ اس کے پاس یہ ٹیپ دو ماہ سے زیادہ عرصے سے موجود ہے اور اس نے ماہرین سے اس کی جانچ کرانے کے لیے ہر ممکن احتیاط برتی تاکہ جعلسازی کے الزام کو مسترد کیا جا سکے۔ 

احمد نورانی نے کہا کہ ملٹی میڈیا فرانزک میں مہارت رکھنے والی معروف امریکی فرم گیریٹ ڈسکوری نے اس ٹیپ کی جانچ کی ہے۔ 

 انہوں نے کہا کہ آڈیو ٹیپ کو تب ہی جاری کیا گیا جب فرم کے ماہرین نے آڈیو فائل کو درست قرار دیا اور انہوں نے کہا کہ “آڈیو میں کسی بھی طرح سے تبدیلی نہیں کی گئی ہے۔

دریں اثناء وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ ججوں کے خلاف ’’مہم‘‘ جلد بازی میں شروع ہوئی جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ لوگوں نے اپنا ہوم ورک ٹھیک سے نہیں کیا۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں