امریکہ کو دورہ روس کا مقصد بتا دیا ہے، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی

پاکستانی وزارت خارجہ نے جمعہ کو یوکرین کے بحران کے پس منظر میں وزیر اعظم عمران خان کے دورہ روس کا دفاع کیا ہے۔

 وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ حکومت کو یقین ہے کہ اس سفر کو آگے بڑھانے کا فیصلہ درست تھا اور اس سے ملک کے ‘سفارتی تعلقات’ کو بڑھانے میں مدد ملی۔ 

یہ بھی پڑھیں | پنجاب: 28 فروری سے پولیو مہم کا آغاز ہو گاے   

 ماسکو سے واپسی کے بعد یہاں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے یہ بھی انکشاف کیا کہ بائیڈن انتظامیہ نے وزیراعظم کے دورہ روس سے قبل پاکستان سے رابطہ کیا تھا۔ 

تاہم، انہوں نے کہا کہ پاکستان نے دورہ امریکہ کے اپنے نقطہ نظر اور مقاصد کا اشتراک کیا ہے اور منصوبہ بندی کے مطابق دورہ آگے بڑھا ہے۔

خیال کیا جاتا ہے کہ امریکہ نے اپنے سینئر عہدیدار کے ذریعے پاکستان سے کہا کہ وہ یوکرین کے حوالے سے ابھرتی ہوئی صورتحال کے پیش نظر روس کے دورے کے فیصلے پر نظر ثانی کرے گا۔ 

شاہ محمود قریشی نے اس بات کی بھی تصدیق کی ہے کہ ماسکو روانگی سے قبل حکومت نے اندرون ملک مشاورت کی تھی جس میں ریٹائرڈ سفارت کاروں اور دیگر متعلقہ افراد کو مدعو کیا گیا تھا تاکہ یہ فیصلہ کیا جا سکے کہ آیا وزیر اعظم کو ماسکو کا دورہ کرنا چاہیے یا نہیں۔ 

وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم نے مشاورت کی تھی۔ ہم نے اس دورے کے فوائد اور نقصانات کا جائزہ لیا ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ مختلف جہتوں کو مدنظر رکھتے ہوئے، حکومت اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ دورہ منصوبہ بندی کے مطابق آگے بڑھنا چاہیے۔ 

 انہوں نے کہا کہ اس فیصلے کی ٹھوس وجہ ہے کہ ہم روس کے ساتھ اپنے تعلقات کو مستحکم کرنا چاہتے ہیں اور اجتماعی حکمت کے ذریعے ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ اس موقع کو ضائع نہیں کیا جانا چاہیے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ وزیراعظم کے دورہ روس کا ایک مقصد تیزی سے بدلتی عالمی سیاست میں پاکستان کی سفارتی جگہ کو بڑھانا اور زیادہ سے زیادہ کرنا ہے۔

 وزیر خارجہ نے دعویٰ کیا کہ ہمارا فیصلہ درست تھا اور ہم سمجھتے ہیں کہ اس دورے سے ہماری سفارتی گنجائش بڑھی ہے۔ 

 پاکستان کے ساتھ ساتھ باہر بھی رائے منقسم تھی کہ آیا یوکرین کے بحران کے پیش نظر وزیراعظم عمران خان کو دورے پہ جانا چاہیے تھا۔ صدر پیوٹن کی وزیر اعظم عمران سے ملاقات سے چند گھنٹے قبل یوکرین کے خلاف مکمل فوجی آپریشن شروع کرنے کے روسی فیصلے نے بحث کو مزید گرم کر دیا تھا۔ 

ذرائع نے بتایا کہ پاکستانی وفد کو 24 فروری کو صبح ہونے پر روس کی جانب سے فوجی آپریشن شروع کرنے کا اندازہ نہیں تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔