امریکہ نے ہمیشہ پاکستان کو استعمال کیا ہے، وزیر اعظم عمران خان

 وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ امریکا نے ہمیشہ پاکستان کو اپنے مقاصد کے لیے استعمال کیا ہے۔

 انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جب بھی امریکا کو ہماری ضرورت پڑی، انہوں نے تعلقات قائم کیے، اور پاکستان ایک فرنٹ لائن ریاست بن گیا اور پھر اسے چھوڑ دیا اور ہم پر پابندیاں لگا دیں۔

 وزیراعظم نے ان خیالات کا اظہار فوڈان یونیورسٹی میں چائنہ انسٹی ٹیوٹ کی ایڈوائزری کمیٹی کے ڈائریکٹر ڈاکٹر ایرک لی کے ساتھ ایک انٹرویو کے دوران کیا۔ 

پاک امریکہ تعلقات پر انہوں نے کہا کہ ایک وقت تھا جب پاکستان کے امریکہ کے ساتھ دوستانہ تعلقات تھے۔ اور جب پاکستان کی ضرورت نہیں رہی تو امریکہ نے اس سے خود کو دور کر لیا۔

 بعد میں انہوں نے بات جاری رکھی، امریکہ اور پاکستان کے درمیان دوستانہ تعلقات بحال ہوئے اور پاکستان امریکہ کا دوست بن گیا۔ اس وقت امریکہ نے ہماری مدد کی لیکن جیسے ہی سوویت یونین افغانستان سے نکلا، امریکہ نے پاکستان پر پابندیاں لگا دیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ نو سال بعد جب نائن الیون ہوا تو پاک امریکا تعلقات ایک بار پھر بہتر ہوئے۔ افغانستان میں امریکا ناکام ہوا تو شکست کا ذمہ دار پاکستان کو ٹھہرایا گیا۔

 وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان نے امریکہ کے ساتھ ایسے تعلقات برقرار نہیں رکھے جیسے چین کے ساتھ ہیں۔ چین پاکستان کا دوست ہے جو وقت کی کسوٹی پر پورا اترا ہے اور پاک چین تعلقات 70 سال سے جاری ہیں۔

 پاکستان ہر فورم پر چین کے ساتھ رہا ہے اور چین نے ہر ضرورت میں پاکستان کا ساتھ دیا ہے۔ 

 انٹرویو کے دوران انہوں نے چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) اور گوادر بندرگاہ پر مغربی ممالک کے شبہات کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا کہ یہ منصوبے علاقائی ترقی کے لیے بہترین موقع ہیں۔ 

انہوں نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ مجھے سمجھ نہیں آرہی کہ سی پیک اور گوادر پورٹ کے بارے میں شکوک کیوں ہیں۔ اس کا کوئی مطلب نہیں کیونکہ جہاں تک پاکستان کا تعلق ہے، میری اولین ترجیح ملک کے 220 ملین لوگ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملک کی تقریباً 25 سے 30 فیصد آبادی غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزار رہی ہے اور پاکستان کو ماضی کی کرپٹ حکومتوں اور ‘دہشت گردی کے خلاف جنگ’ کی وجہ سے بہت نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ انہوں نے پھر کہا کہ پاکستان کو کبھی بھی جنگ میں حصہ نہیں لینا چاہیے تھا۔

 نائن الیون کے بعد 20 سالوں میں جہاں امریکہ نے 4,000 افراد کو کھویا وہاں پاکستان نے 80 ہزار افراد کو کھویا اور معیشت کو 100 بلین ڈالر سے زیادہ کا نقصان ہوا۔ وزیر اعظم عمران نے اس بات کا اعادہ کیا کہ حکومت کی اولین ترجیح عوام کی دیکھ بھال ہے اور جیو اکنامکس پر زور دیا گیا ہے۔

 ہم اپنی معیشت کی تعمیر اور اپنے لوگوں کو غربت سے نکالنا چاہتے ہیں۔ پاکستان اس حوالے سے چین کو رول ماڈل کے طور پر دیکھتا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔