مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

امریکا کی جانب سے پاکستان سے اسمگل کی گئی لاکھوں ڈالر مالیت کی نوادرات واپسی

امریکہ نے تقریبا4 3.3 ملین ڈالر مالیت کی 104 مسروقہ اور اسمگل شدہ نوادرات پاکستان کو وطن واپسی کر دی ہے۔

تقریب کے دوران پاکستان قونصل جنرل عائشہ علی اور امریکی ہوم لینڈ سکیورٹی انویسٹی گیشن حکام نے شرکت کی۔

 برآمد ہونے والے آرٹ کے ٹکڑوں میں ایک سکسٹ ریلیوری ڈبیا  جس کی قیمت 175،000 ڈالر ہے ، ایک بودھی ستوا کا گلڈڈ سکسٹ ہیڈ جس کی قیمت 250،000 ڈالر اور ایک سٹوکو بودھی ستوا جس کی قیمت تقریبا 750،000 ہے، شامل ہے۔

یہ بھی پڑھیں | وکٹم ، ٹک ٹکر ، ایف آئی آر میں غلط گھر کا ایڈریس لکھیں

 نیو یارک میں مقیم آرٹ چور سبھاش کپور ، جو مبینہ طور پر 100 ملین ڈالر کا بین الاقوامی اسمگلنگ ریکیٹ چلانے کے الزام میں جیل میں ہے۔ وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر یہ نوادرات امریکہ سمگل کرتا ہے۔

 ایچ ایس آئی نے تفصیلی تحقیقات کی اور پاکستان سمیت کئی ممالک سے لوٹ مار کے بعد امریکہ اسمگل شدہ نوادرات برآمد کیے۔ 

ڈسٹرکٹ اٹارنی وینس نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستانیوں کو واپس لوٹے گئے فن پاروں کا یہ شاندار مجموعہ اس قوم کی بھرپور ثقافتی ورثہ اور روشن خیالی اور امن کے لیے انسانیت کی نہ ختم ہونے والی جستجو کی علامت ہے کیونکہ ہر چوری شدہ چیز اپنی کہانی سناتی ہے۔

 پاکستان کی قونصل جنرل عائشہ علی نے مین ہٹن ڈسٹرکٹ اٹارنی آفس اور ڈیپارٹمنٹ آف ہوم لینڈ سکیورٹی کے پاکستان کے چوری شدہ ثقافتی خزانوں کی بازیابی کی کوششوں کو سراہا۔

 انہوں نے یہ امید بھی ظاہر کی کہ برآمد شدہ فن پارے جلد ہی پاکستانی عجائب گھروں میں آویزاں کیے جائیں گے۔ اس سے قبل نومبر 2020 میں ، امریکی حکام کے دفتر نے پاکستان کو 45 نوادرات واپس کیے تھے جو 2015 میں نایف ہمسی سے برآمد کیے گئے تھے جو کہ جنوبی ایشیا کے علاقے سے غیر قانونی لوٹ مار ، برآمد اور قدیم آرٹ کی فروخت میں ملوث بدنام زمانہ اسمگلر ہے۔ 

اتھارٹی نے اگست 2020 سے اب تک 11 ممالک کو 497 نوادرات واپس کیے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔