الیکشن کمیشن کا ضمنی انتخابات ملتوی کرنے سے انکار

ضمنی انتخابات شیڈول کے مطابق ہوں گے

تمام غیر یقینی صورتحال کو ختم کرتے ہوئے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے منگل کو اعلان کیا کہ آٹھ قومی اور تین صوبائی اسمبلی کے حلقوں پر ضمنی انتخابات شیڈول کے مطابق ہوں گے۔

 چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ کی زیر صدارت اعلیٰ سطح کے اجلاس میں سندھ کے بلدیاتی انتخابات کا دوسرا مرحلہ 23 ​​اکتوبر کو کرانے کا فیصلہ بھی کیا گیا۔ 

انتخابات 16 اکتوبر کو ہوں گے

 قومی اسمبلی کی 10 میں سے 8 نشستوں پر ضمنی انتخاب، جو پی ٹی آئی کے اراکین اسمبلی کے استعفے قومی اسمبلی کے اسپیکر راجہ پرویز اشرف کی جانب سے منظور کیے جانے کے بعد خالی ہوئی تھیں، 16 اکتوبر کو ہوں گے۔

 این اے 45 (کرم) پر پولنگ نہیں ہوگی۔ یہ فیصلہ سیکیورٹی کی صورتحال کی وجہ سے ہوا جبکہ ایک قانون ساز عبدالشکور شاد کو اسلام آباد ہائی کورٹ نے استعفیٰ کی منظوری کو چیلنج کرنے کے بعد بحال کر دیا ہے۔ 

 منگل کو سیکرٹری دفاع و داخلہ، صوبائی چیف سیکرٹریز اور انسپکٹرز جنرلز اور سکیورٹی اداروں کے نمائندوں نے کمیشن کو بریفنگ دی۔ الیکشن کمیشن کے سیکرٹری عمر حامد خان نے بھی شرکاء کو تیاریوں پر بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ ضمنی انتخابات کے تمام انتظامات مکمل کر لئے گئے ہیں۔ 

پولنگ والے حلقوں کی لسٹ

 قومی اسمبلی کے جن حلقوں میں پولنگ ہو گی وہ یہ ہیں: این اے 22 مردان ، این اے 24 چارسدہ ، این اے 31 پشاور ، این اے 108 فیصل آباد ، این اے 118 ننکانہ صاحب ، این اے 237۔ ملیر ٹو اور این اے 239 کورنگی کراچی۔

یہ بھی پڑھیں | پی ٹی آئی آج کے پارلیمنٹ جوائنٹ سیشن میں شرکت نہیں کرے گی

یہ بھی پڑھیں | لیک آڈیو کے پیچھے کون ہے، پتہ چل گیا، رانا ثناء اللہ

صوبائی اسمبلی کی تین نشستیں  پنجاب سے ہیں: پی پی-139 شیخوپورہ-V، پی پی-209 خانیوال اور پی پی-241 بہاولنگر۔ اس دوران کراچی اور حیدرآباد ڈویژن میں بلدیاتی انتخابات ہوں گے۔ 

پولنگ کیوں ملتوی ہوئی؟

پولنگ پہلے ہی ہونا تھی لیکن ملک میں سکیورٹی اہلکاروں کی عدم دستیابی اور سیلاب کی صورتحال کے باعث ملتوی کر دی گئی۔ 

اس میں شامل جماعتوں نے ایک بار پھر ای سی پی پر زور دیا کہ وہ مختلف بہانوں سے انتخابات ملتوی کرے۔ 

وفاقی حکومت نے کمیشن سے کہا تھا کہ وہ ضمنی انتخابات کو کم از کم 90 دن کے لیے موخر کرے کیونکہ ایک “سیاسی جماعت” دارالحکومت کا “گھیراؤ” کرنے کی منصوبہ بندی کر رہی ہے۔ یہ بات پی ٹی آئی کے لانگ مارچ کے حوالے سے کی گئی۔

سیکیورٹی اہلکاروں کی عدم دستیابی

مزید برآں، سندھ حکومتوں نے دیگر وجوہات کے علاوہ سیکیورٹی اہلکاروں کی عدم دستیابی کی وجہ سے بلدیاتی انتخابات کے انعقاد پر تحفظات کا اظہار کیا تھا۔

 وزارت داخلہ کی جانب سے ایک خط میں کہا گیا ہے کہ انٹیلی جنس ایجنسیوں کی مصدقہ اطلاعات کی بنیاد پر، یہ بات سامنے آئی ہے کہ ایک سیاسی جماعت 12 سے 17 اکتوبر کے درمیان وفاقی دارالحکومت کا محاصرہ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہی ہے۔

 ای سی پی کو خط میں مزید کہا گیا ہے کہ ان رپورٹس کی روشنی میں امن برقرار رکھنے کے لیے دارالحکومت میں تمام دستیاب وسائل کا ہونا بہت ضروری ہے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔