مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

اشرف غنی نے فرار سے پہلے جوبائڈن سے فون پر کیا گفتگو کی؟

امریکی صدر جو بائیڈن اور افغانستان کے سابق صدر اشرف غنی نے آخری بار 23 جولائی کو بات کی تھی جس کی تفصیلات سامنے آ گئی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق 15 اگست کو کابل میں طالبان کے اقتدار سے چند ہفتے قبل صدر امریکہ جو بائڈن اور اشرف غنی دونوں کے درمیان آخری کال تقریبا 14 منٹ تک جاری رہی جس میں انہوں نے فوجی امداد ، سیاسی حکمت عملی وغیرہ پر تبادلہ خیال کیا لیکن ان میں سے کسی نے بھی پورے ملک کو طالبان کے حوالے کرنے کے بارے میں کوئی بات نہیں کی جس کا مطلب یہ یے کہ طالبان کا پورے ملک میں اقتدار حاصل کرنا کسی کے وہم و گمان میں بھی نہیں تھا۔

 خبر رساں ایجنسی نے بتایا کہ رائٹرز نے صدارتی فون کال کے ایک ٹرانسکرپٹ کا جائزہ لیا اور گفتگو کو مستند کرنے کے لیے آڈیو کو سنا۔ یہ مواد ایک ذرائع نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر فراہم کیا جو اسے شئیر کرنے کا مجاز نہیں تھا۔

یہ بھی پڑھیں | اس لڑکی کی قسمت جو ایک کلون بن گئی اور فروخت ہونے والے کھلونے جاگ گئے

 بائیڈن نے اشرف غنی سے کہا کہ اگر امریکا طالبان کے خلاف کوئی منصوبہ تیار کرے گا تو امریکہ قریبی فضائی مدد فراہم کرے گا۔ بائیڈن نے اشرف غنی کو مشورہ دیا کہ وہ فوجی حکمت عملی کے لیے طاقتور افغانوں سے خریداری کریں۔

جو بائیڈن نے کہا کہ وہ “فوجی آدمی” نہیں ہیں اور اس لیے اشرف غنی کو فوجی حکمت عملی کے بارے میں مشورہ نہیں دے سکتے ، لیکن انہوں نے مشورہ دیا کہ وہ دنیا کے سامنے افغانستان کے تاثر کو بہتر بنانے پر کام کریں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔