اسلام آباد ہائیکورٹ نے اٹارنی جنرل سے صدر کے اختیارات پر وضاحت طلب کر لی

اٹارنی جنرل آف پاکستان (اے جی پی) اشتر اوصاف علی نے بدھ کے روز اسلام آباد ہائی کورٹ کے سامنے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ صدر آئین کے مطابق وزیراعظم کے مشورے پر گورنر کی تقرری کرتے تھے۔ 

اے جی پی نے چیف جسٹس اطہر من اللہ کی عدالت میں سابق گورنر پنجاب عمر سرفراز چیمہ کی جانب سے ان کی برطرفی کے نوٹیفکیشن کو چیلنج کرنے والے کیس میں اپنے دلائل جاری رکھے۔ 

اشتر اوصاف نے کہا کہ آئین کا یہ مطلب نہیں ہے کہ صدر اپنی تقرری کے بعد اگلی ہی تاریخ کو گورنر کو ہٹا سکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ صدر کے دفتر کے اختیارات اور کام ایک جیسے ہیں۔ 

 اے جی پی نے کہا کہ جب وزیراعظم کوئی مشورہ بھیجتے ہیں تو صدر اسے منظور یا واپس کر سکتے ہیں۔ تاہم وزیراعظم کے دوسرے مشورے پر صدر کے پاس اس کی منظوری کے علاوہ کوئی اختیار نہیں تھا۔

یہ بھی پڑھیں | علامہ اقبال کے بیٹے کے گھر پر چھاپہ؛ سخت رد عمل آ گیا

عدالت نے اٹارنی جنرل سے صدر کے اختیارات پر بھی وضاحت طلب کر لی۔

 عدالت نے اے جی پی سے اس نکتے پر اس کی مدد کرنے کو کہا کہ صدر کی مرضی ان کے صوابدیدی اختیارات سے مختلف کیسے ہو سکتی ہے۔ عدالت نے اے جی پی سے 1973 سے اب تک کی تبدیلیاں چارٹ کی شکل میں فراہم کرنے کو بھی کہا۔ 

درخواست گزار کے وکیل ڈاکٹر بابر اعوان نے عدالت سے استدعا کی کہ کیس کی سماعت ایک دن کے لیے ملتوی کی جائے کیونکہ انہیں سپریم کورٹ جانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ جمعرات کو کراس آرگول شروع کریں گے۔

 چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ مسئلہ یہ ہے کہ بڑا صوبہ گورنر کے بغیر چل رہا ہے۔ عدالت نے کیس کی سماعت (آج) جمعرات تک ملتوی کر دی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں