مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    اسلام آباد میں سرکاری ملازمین کا تنخواہ بڑھانے کا مطالبہ، احتجاج پر پولیس کا آنسو گیس

    اسلام آباد پولیس نے آج ڈی چوک پر مظاہرے کے دوران احتجاج کرنے والے سرکاری ملازمین پر آنسو گیس کے فائر کیے۔ ساتھ ہی بہت سے مظاہرین کو گرفتار کیا گیا ہے۔ مظاہرین نے وفاقی اور صوبائی حکومتوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان کی تنخواہوں اور پنشن میں اضافہ کریں۔

    تفصیلات کے مطابق کم از کم 2 ہزار افراد ڈی چوک پر جمع ہوئے اور پارلیمنٹ ہاؤس کی طرف مارچ کرنے کا منصوبہ بنایا۔ پولیس نے مارچ کرنے سے روکنے کے لئے آنسو گیس کے گولے فائر کیے۔ سرکاری افسران نے حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔

     وزیر داخلہ شیخ رشید سمیت متعدد وفاقی وزراء نے سرکاری افسران کو یقین دلایا ہے کہ ان کے مطالبات پورے کیے جائیں گے۔ تاہم مظاہرین نے کہا ہے کہ وہ زبانی وعدے نہیں چاہتے ہیں۔ 

    یہ بھی پڑھیں | عمران خان کا علماء کرام کو کرپشن کے خلاف آواز اٹھانے کا مشورہ

    مظاہرین کا کہنا تھا کہ حکومت ایک نوٹیفکیشن جاری کرے اور ہماری تنخواہوں میں اضافے کی تصدیق کرے۔  شیخ رشید وزیر داخلہ شیخ رشید نے کہا ہے کہ حکومت کو تحریری نوٹیفکیشن جاری کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔ اگر وہ چاہیں تو ہم ابھی کر سکتے ہیں۔ واحد مسئلہ یہ ہے کہ ہم نے افسران کی تنخواہوں میں 5 سے 16 گریڈ کے درمیان اضافہ کرنے پر اتفاق کیا۔ وہ اب گریڈ 22 کے افسران کے لئے تنخواہ میں اضافے کا مطالبہ کررہے ہیں۔

     حکومت کے پاس ایسا کرنے کے لئے فنڈز نہیں ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ مظاہرین پنجاب ، خیبر پختونخوا اور سندھ میں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کا کہہ رہے ہیں۔ ہمارے پاس 18 ویں ترمیم کی وجہ سے ایسا کرنے کا اختیار نہیں ہے۔ تاہم ، مظاہرین ہماری بات نہیں سن رہے ہیں۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x