آٹھ سال بعد بلدیہ فیکٹری آتشزدگی کیس میں ایم کیو ایم کے دو افراد کو سزائے موت

انسداد دہشت گردی کی عدالت نے بلدیہ فیکٹری میں آتشزدگی کے واقعے میں 260 سے زیادہ مزدوروں کی ہلاکت میں ملوث ہونے کے الزام میں ایم کیو ایم کے دو کارکنوں ، عبدالرحمن ‘بھولا’ اور زبیر ‘چڑیا’ کو سزائے موت سنا دی ہے۔

تاہم ایم کیو ایم کے رہنما رؤف صدیقی سمیت عمر حسن قادری ، ڈاکٹر عبدالستار خان اور اقبال ادیب جن پر اس واقعے میں ملوث ہونے کا الزام لگایا گیا تھا عدالت نے ثبوت کے نا ہونے پر انہیں بری کردیا۔ چار دیگر افراد شاہ رخ ، فضل احمد ، ارشد محمود اور علی محمد  کو جرم میں سہولت کاری کرنے پر عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

بلدیہ فیکٹری کا یہ افسوسناک واقعہ آٹھ سال پہلے پیش آیا تھا جس کا فیصلہ انسداد دہشتگردی کی عدالت سے گزشتہ روز سنایا گیا ہے۔  خصوصی سرکاری وکیل نے اس ماہ کے شروع میں کہا تھا کہ مختلف فریقین کے دلائل مکمل ہونے کے بعد 2 ستمبر کو فیصلہ محفوظ کرلیا گیا تھا جبکہ یہ کیس تقریبا آٹھ سالوں سے مختلف عدالتوں میں زیر سماعت رہا ہے۔ا

تفصیلات کے مطابق عدالت میں یہ بات ثابت ہو چکی ہے کہ فیکٹری کو ایم کیو ایم سے وابستہ افراد نے آگ اس لئے لگا دی تھی کیونکہ فیکٹری مالکان نے پارٹی کے بھتہ کے پیسے کے مطالبے کو ماننے سے انکار کردیا تھا۔ 

فیکٹری کے مالکان میں سے ایک ارشاد نے عدالت میں گواہی دی ہے کہ ایم کیو ایم کے جوانوں نے انہیں فیکٹری کے منافع میں 2 کروڑ 50 لاکھ روپے یا 50 فیصد کا حصہ ادا کرنے کو کہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ دس ملین روپے ادا کرنے پر راضی ہے۔ تمام سماعت کے دوران ، 400 کے قریب گواہوں کے بیانات ریکارڈ کیے گئے۔ ایم کیو ایم کے سابق سیکٹر انچارج عبد الرحمن عرف بھولا اور زبیر عرف چڑیا کو آخر کار اس کیس میں گرفتار کرلیا گیا۔ بھولا کو دسمبر 2016 میں بین الاقوامی فوجداری پولیس تنظیم ، یا انٹرپول کی مدد سے بینکاک سے گرفتار کیا گیا تھا۔ اس نے جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے جرم کا اعتراف کیا تھا۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x