مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

آفتاب آفریدی پر سوات سے اسلام آباد جاتے ہوئے پشاور موٹر وے پر فائرنگ، قتل

صوابی کی عنبر انٹر چینج کے قریب موٹر وے پر اتوار کی شام سوات کی انسداد دہشت گردی عدالت کے جج ، ان کی اہلیہ اور دو بچوں کو فائرنگ کر کے ہلاک کردیا گیا ہے۔ 

اس حملے میں ان کا ڈرائیور اور گارڈ شدید زخمی ہوگئے ہیں۔ نجی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے صوابی پولیس کے ایک عہدیدار نے بتایا کہ جسٹس آفتاب آفریدی اسلام آباد جارہے تھے کہ ان کی گاڑی پر حملہ ہوا۔ 

انہوں نے کہا کہ جج ، ان کی اہلیہ اور دو بچے موقع پر ہی ہلاک ہوگئے جبکہ ان کے ڈرائیور اور گارڈ کو شدید چوٹیں آئی ہیں۔ موٹر وے پولیس صوابی پولیس کے ساتھ ساتھ حملے کے مقام کا معائنہ کررہی ہے۔ 

صوابی کے ڈی پی او محمد شعیب نے بتایا کہ مرحوم جج کے بیٹے کی جانب سے ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ یہ واقعہ افسوسناک ہے۔ جبکہ تحقیقات جاری ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد کا مارگلہ ملز نیشنل پارک کوویڈ19 کی وجہ سے بند

خیبر پختونخواہ کے انسپکٹر جنرل پولیس ڈاکٹر ثناء اللہ عباسی نے کہا ہے کہ ملزم کو جلد ہی گرفتار کرلیا جائے گا۔ 

وزیر اعظم عمران خان نے بھی حملے کی مذمت کی۔ ٹویٹر پر وزیر اعظم نے کہا کہ اس بہیمانہ حرکت کے مرتکب افراد کو پکڑا جائے گا اور قانون کی پوری شدت کے ساتھ نمٹا جائے گا۔ 

وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے اس فعل کو بزدلانہ اور ظالمانہ قرار دیا ہے۔ انہوں نے پولیس عہدیداروں کو ہدایت کی کہ وہ حملے کے ذمہ دار لوگوں کو جلد سے جلد پکڑیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ حملہ آور قانون سے نہیں بچ پائیں گے۔ 

صوبائی چیف ایگزیکٹو نے اس واقعے میں جیتی جان کے ضیاع اور مرحوم جج اور ان کے اہل خانہ کے لواحقین سے اظہار یکجہتی پر اظہار افسوس کیا۔ پاکستان بار کونسل کی جانب سے جاری ایک پریس ریلیز میں ، وائس چیئرمین خوش دل خان اور ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین فہیم ولی نے جج اور ان کے اہل خانہ کے بہیمانہ قتل کی مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ قانونی برادری کے لئے یہ بات بڑی حد تک پریشان کن ہے کہ ایک قابل احترام عدالتی افسر کو اس طرح کے سفاکانہ طریقے سے قتل کیا گیا۔

 پی بی سی کے عہدیداروں نے مزید کہا کہ اس واقعے سے وکلاء کو شدید صدمہ پہنچا ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتیں فوری طور پر مجرموں کو گرفتار کریں اور انھیں مثالی سزا دی جائے۔ پی بی سی حکام نے عدالتی افسران کو مناسب سکیورٹی کی فراہمی کا مطالبہ بھی کیا۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔