آئی سی سی ورلڈ کپ: کیا پاکستان اور انڈیا کا فائنل ممکن ہے؟

ٹیسٹ فارمیٹ میں انتہائی ہنگامہ

ہندوستان اور پاکستان دونوں نے اس سال ٹیسٹ فارمیٹ میں انتہائی ہنگامہ خیز سفر کیا ہے۔ 

ہندوستان کی 2022 کی مہم کا آغاز نتیجہ خیز نہیں تھا کیونکہ وہ جنوبی افریقہ سے ہار گیا، جو اس وقت ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ پوائنٹس ٹیبل میں سب سے اوپر ہے۔ اس کے بعد انہوں نے سری لنکا کے خلاف سیریز جیت لی لیکن انگلینڈ کے خلاف سیریز جیتنے میں ناکام رہے کیونکہ وہ جون میں دوبارہ شیڈول واحد ٹیسٹ ہار گئے۔ 

 دوسری طرف، پاکستان نے آسٹریلیا کے خلاف بہترین کوششیں کیں جب دونوں ٹیمیں تین میچوں کے ٹیسٹ کے لیے آمنے سامنے ہوئیں۔ پہلے دو میچ ڈرا پر ختم ہونے کے بعد، پاکستان نے تیسرا میچ ہار کر سیریز 1-0 سے اپنے نام کر لی۔ اس کے بعد پاکستان نے دو میچوں کی سیریز کے لیے گال میں سری لنکا کا سامنا کیا اور پہلا میچ جیت کر کچھ بڑے پوائنٹس حاصل کیے لیکن دوسرا میچ ہارنے کے بعد نیچے آ گیا۔ 

 اس طرح تیسری، چوتھی اور پانچویں پوزیشن پر موجود ٹیموں کے درمیان بہت سخت مقابلہ ہوا جو اس وقت بالترتیب سری لنکا، بھارت اور پاکستان ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ پاکستان کی آخری دو سیریز — انگلینڈ کے خلاف تین ٹیسٹ اور دو نیوزی لینڈ کے خلاف — پاکستان میں کھیلی جائیں گی جس سے انہیں فائدہ ہو گا۔ اگر وہ ہر ایک جیتنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں تو ان کا فیصد بڑھ کر 69.05 ہو جائے گا۔ ان کا فیصد 61.9 فیصد ہو جائے گا اگر وہ ان دو سیریزوں (چار فتوحات اور ایک شکست) میں سے 48 پوائنٹس حاصل کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کی ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ میں جیت بابر اعظم پر منحصر ہے، رکی پونٹنگ

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کی ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ میں جیت بابر اعظم پر منحصر ہے، رکی پونٹنگ

 ہندوستان کو اپنے بقیہ میچز میں چھ جیتنے کی ضرورت ہے۔ دریں اثنا، ہندوستان اب چوتھے نمبر پر ہے لیکن انہیں آسٹریلیا کے خلاف اپنی آنے والی دو سیریز (چار گھریلو کھیل) اور بنگلہ دیش (دو دور کھیل) میں سیڑھی کو آگے بڑھانے کے اپنے امکانات کے بارے میں پر امید رہنا چاہیے۔ 

ہندوستان کا فیصد بڑھ کر 68.06 ہو جائے گا اگر وہ چھ میچ جیت جاتے ہیں۔ اس کے بعد یہ آسٹریلیا کے کل سے زیادہ ہو گا چاہے وہ اپنے پانچوں ہوم ٹیسٹ میچ جیت لے۔ اس کے مطابق، 2023 میں لارڈز میں تمام برصغیر کا کلائمکس ممکن ہے اگر ہندوستان اور پاکستان اپنے باقی تمام میچز جیت جائیں اور جنوبی افریقہ ڈراپ ہو جائے۔ 

دونوں ٹیموں کے لیے سال بھر میں جیت کی دوڑ جاری رکھنا مشکل ہو گا، ان میچوں کی تعداد کو دیکھتے ہوئے جو ان کے کھیلنے ہیں۔

 لیکن اگر ہندوستان اور پاکستان مذکورہ بالا تقاضوں کو پورا کرتے ہیں تو ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ فائنل 2023 میں ان کے آمنے سامنے آنے کے امکانات ہیں تاہم ایسا بہت مشکل نظر آ رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں