آئی ایم ایف کے مطالبے پر پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ متوقع

پاکستان تمام پیٹرولیم مصنوعات پر لیوی میں مزید اضافے

  وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے بدھ کو کہا ہے کہ پاکستان تمام پیٹرولیم مصنوعات پر لیوی میں مزید اضافے کی بقیہ ایک شرط کو پورا کرنے کے لیے تیار ہے جسے انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) نے پروگرام کو بحال کرنے کے لیے بورڈ میٹنگ بلانے کے لیے مقرر کیا تھا۔ 

وزیر کے بیان سے ان قیاس آرائیوں کو ختم ہونا چاہیے کہ حکومت جاری سیاسی بحران کی وجہ سے اگست سے ٹیکسوں میں اضافہ نہیں کر سکتی۔ وزیر خزانہ نے آئی ایم ایف کو دیے گئے وعدوں پر قائم رہتے ہوئے کہا کہ پیٹرولیم لیوی کے نرخوں میں بتدریج اضافہ کرنے کا شیڈول ہے جس کے مطابق لیوی مستقبل میں مزید بڑھے گی۔

 وزیر خزانہ نے ایک سیمینار سے خطاب کیا جو غیر ملکی قرض دہندہ کی شرط کے تحت منعقد کیا گیا تھا تاکہ سرکاری اداروں میں اصلاحات کے لیے قرض کے لیے اہل ہو سکے۔ سیمینار کی مالی اعانت غیر ملکی قرضوں سے حاصل ہونے والی رقم سے ایسے وقت میں کی گئی جب ملک ڈیفالٹ کے دہانے پر ہے۔ 

آئی ایم ایف نے نئے بجٹ کی منظوری کی پیشگی شرائط رکھی

مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف نے نئے بجٹ کی منظوری کی پیشگی شرائط رکھی تھیں جس میں صوبوں کے ساتھ کیش سرپلسز بنانے کے لیے مفاہمت کی یادداشت، پیٹرولیم لیوی کی شرح میں اضافہ، جولائی، اگست اور اکتوبر میں بجلی کی قیمتوں میں اضافہ اور شرح سود میں اضافہ شامل ہے۔

انہوں نے بتایا کہ یہ شرائط پوری ہو چکی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | بجلی 3.5 فی یونٹ کے حساب سے ایک بار پھر مہنگی کر دی گئی

یہ بھی پڑھیں | پرویز الہی نے وزیر اعلی پنجاب کے طور پر حلف اٹھا لیا 

 آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے کے تحت حکومت نے جولائی سے پیٹرول پر 10 روپے فی لیٹر لیوی عائد کی تھی جس میں یکم اگست کو مزید 10 روپے اضافہ کرنا پڑے گا جب تک کہ یہ آہستہ آہستہ 50 روپے فی لیٹر تک نہ پہنچ جائے۔ 

گزشتہ 10 دنوں کے دوران کرنسی کی قدر میں بڑے پیمانے پر کمی کی وجہ سے اگست سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں نمایاں اضافہ ہوسکتا ہے، جس سے ملک میں افراط زر کی شرح بڑھ سکتی ہے۔ اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے مطابق، روپیہ 1.31 فیصد گر کر 236 روپے پر بند ہوا ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف بورڈ کا اجلاس اگست کے آخر میں ہوگا حالانکہ وہ چاہتے تھے کہ یہ اجلاس اگست کے شروع میں ہو۔ آئی ایم ایف بورڈ کا اجلاس 25 اگست کو متوقع ہے۔ 

وزیر خزانہ نے یہ بھی کہا کہ انسداد بدعنوانی کے قوانین کی تاثیر کی تشخیص کے لیے ماہرین کی ایک ٹیم تشکیل دینے کے لیے ایک ساختی معیار موجود ہے۔ 

 وزیر خزانہ نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی سابقہ ​​حکومت نے نیب کی طرف سے پیچھا کیے جانے کے خوف سے سستے ترین ایل این جی سودوں پر دستخط کرنے میں تاخیر کی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ مشاورت کے بعد ہم ان قوانین کا جائزہ لینے کے لیے عالمی اور پاکستانی ماہرین کی ایک ٹیم مقرر کریں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں