مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

پاکستان میں غائب، مکمل بلیک آؤٹ، لیکن کیوں؟

ہفتہ کے روز تقریبا شام 12بجے پورے ملک میں زبردست بلیک آؤٹ ہوا۔ 

تفصیلات کے مطابق اتوار کے روز بجلی کی بحالی سے قبل 18 گھنٹے تک بجلی کی معطلی کا سلسلہ جاری رہا جبکہ اس دوران دارالحکومت اسلام آباد ، کراچی اور لاہور سمیت ملک کا اسی فیصد تاریکی میں ڈوبا رہا۔ 

اس بلیک آؤٹ کی وجہ جیشنل گرڈ کی فریکوینسی کا 50 سے صفر پر آنا تھا۔ ایک پیچیدہ تقسیم نظام کا مطلب ہے کہ گرڈ کے ایک حصے میں ایک مسئلہ ملک بھر میں خرابی پیدا کرسکتا ہے۔ 

اس بلاک آؤٹ کی اطلاع کراچی ، لاہور ، اسلام آباد اور ملتان سمیت بڑے شہری مراکز کے رہائشیوں نے سوشل میڈیا پر کی تھی۔

یہ بھی پڑھیں | ہزارہ برادری کا دھرنا ختم، شہداء کی تدفین آج ہو گی

 اس دوران پاکستان کے باسیوں نے جی بھر کر سوشل میڈیا پر میمز بنائیں اور شئیر کیں۔ خوب طنز و مزاح کیا۔

 ایشیاء کے مبصر اور ماہر مائیکل کوجل مین نے آن لائن لکھا کہ پاکستان کا بڑا حصہ اندھیرے میں ڈوب گیا ہے۔ یہ پہلا موقع نہیں جب ایسا ہوا ہو۔ ملک کا بجلی کا بنیادی ڈھانچہ نازک ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں ، دہشتگردانہ حملوں کو اس طرح کی بندش کا ذمہ دار ٹھہرایا جاتا رہا ہے۔ جبکہ اب کی بار ایسا نہیں ہے۔

وزیر اعظم عمران  خان نے بعد میں کہا کہ بیشتر بڑے شہروں میں بجلی بحال ہوگئی ہے لیکن گرڈ کو معمول پر واپس آنے میں مزید چند گھنٹے لگیں گے۔

آدھی رات سے عین قبل صوبہ سندھ کے گڈو پاور پلانٹ میں خرابی پیدا ہونے کے بعد ہوا۔

انہوں نے مزید بتایا کہ تفتیش کار غلطی کی وجہ معلوم کرنے کے لئے جائے وقوع پر موجود ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔