لڑکی پر تشدد: ملزم عثمان مرزا سمیت 5 افراد کو عمر قید کی سزا

لڑکا لڑکی جوڑے پر تشدد اور جنسی زیادتی کے مقدمے کے مرکزی ملزم عثمان مرزا اور دیگر چار افراد کو جمعہ کو اسلام آباد کی ایک عدالت نے عمر قید کی سزا سنائی ہے۔

 عمر قید کی سزا پانے والے دیگر ملزمان میں محب بنگش، اداس قیوم بٹ، حافظ عطاء الرحمان اور فرحان شاہین شامل ہیں۔ تاہم دو شریک ملزمان عمر بلال اور ریحان کو بری کر دیا گیا ہے۔

ایڈیشنل سیشن جج عطا ربانی نے اسلام آباد کے ای 11 سیکٹر میں لڑکے اور لڑکی پر تشدد کے مقدمے کا محفوظ کیا گیا فیصلہ سنایا۔ 

 ملزم فرحان شاہین کو بھی عدالت میں پیش کیا گیا جس نے جج کو بتایا کہ وہ جائے وقوعہ پر موجود نہ ہونے کی وجہ سے بے قصور ہے۔

 واضح رہے کہ وفاقی حکومت نے 11 جنوری کو جوڑے کی جانب سے ملزمان کی جانب سے ان پر تشدد اور جنسی زیادتی کے اپنے سابقہ ​​بیان سے انحراف کے بعد کیس کو خود فالو کیا تھا۔

 ساڑھے پانچ ماہ سے زائد عرصے تک جاری رہنے والے مقدمے کے دوران عدالت نے 21 گواہوں پر جرح کی۔ گواہوں میں فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) کے تین اہلکار بھی شامل تھے۔ 

 دریں اثنا، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے عدالت کی جانب سے ملزمان کو سزا سنائے جانے کا خیرمقدم کرتے ہوئے دونوں کے سابقہ ​​بیان سے انحراف کیا۔ 

 انہوں نے عدالتی فیصلے کو جدید ٹیکنالوجی کو بطور ثبوت قبول کرنے کی عمدہ مثال قرار دیا۔ 

صرف وہی معاشرے ترقی کی سیڑھی پر چڑھتے ہیں جہاں انصاف ہوتا ہے۔

 فواد چوہدری نے مزید کہا کہ حکومت سیالکوٹ لنچنگ اور دیگر مقدمات میں انصاف فراہم کرنے کے قریب ہے۔ 

 یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ جولائی 2021 میں سوشل میڈیا پر ایک لڑکے اور لڑکی کی جانب سے تشدد کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد گولڑہ تھانے میں ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں | ملائشین قائد حزب اختلاف وزیر اعظم عمران خان کے فین نکلے   

اس سے قبل 15 مارچ کو ہونے والی سماعت کے دوران عثمان مرزا کے وکیل نے کہا تھا کہ متاثرین کے بیانات سے مکرنا غیر ضروری ہے اور اس طرح عدلیہ کی تضحیک نہیں کی جا سکتی۔

 ایڈیشنل سیشن جج عطا ربانی نے کیس کی سماعت کی تو شریک ملزم بلال مروت کے وکیل شیر افضل مروت نے کہا کہ وہ نہ تو کسی ڈیل کا حصہ ہیں اور نہ ہی لڑکے اور لڑکی کے بیان سے فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں۔ “ہمارے خلاف میرٹ پر کوئی کیس نہیں تھا۔ لہٰذا، ہم چاہتے ہیں کہ میرٹ پر مراعات دی جائیں اور کیس سے بری کیا جائے۔

دوسری جانب عثمان مرزا نے جیل اہلکار کے ساتھ ناروا سلوک کے خلاف تحریری درخواست دائر کی تھی۔ درخواست میں عثمان مرزا نے کہا تھا کہ کانسٹیبل صفدر نے ان کے خلاف نازیبا زبان استعمال کی۔ جیل میں تعینات کانسٹیبل بھی عدالت میں پیش ہوئے اور الزامات کی تردید کی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔