سوئی گیس کمپنی نے گیس سپلائی شیڈیول سے متعلق خبروں کی تردید کر دی

 پاکستان  پاکستان

سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ 

 اتوار کو سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ان خبروں کی تردید کی ہے کہ  پاکستان میں سردیوں کے مہینوں میں متوقع گیس کی قلت کے سبب دن میں تین دفعہ گیس کی فراہمی کا شیڈول جاری کیا ہے۔ 

 سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ایک تصویر کا حوالہ دیتے ہوئے، گیس کمپنی نے واضح کیا کہ سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ  سے جو معلومات منسوب کی جا رہی ہیں وہ “جعلی خبریں” ہیں۔ 

سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ شیئر کی جا رہی ہے جس میں ‘گیس شیڈول’ درج ہے اور معلومات کو سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ سے منسوب کیا جا رہا ہے۔ براہ کرم نوٹ کریں کہ یہ جعلی خبر ہے اور سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ   کا اس سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اگر کوئی اعلان ہو گا تو وہ وزارت توانائی (پیٹرولیم ڈویژن) کی طرف سے ہوگا۔

  سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ   کے حوالے سے مراسلہ میں دعویٰ کیا گیا کہ گیس کمپنی نے گیس لوڈ شیڈنگ کے لیے ٹائم ٹیبل کا اعلان کر دیا ہے جس کے مطابق گھریلو صارفین کو مختلف اوقات میں دن میں تین بار گیس فراہم کی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں | مینار پاکستان واقعہ: کیا واقعی عائشہ اکرم اور ریمبو بھاری رقم بٹور چکے ہیں؟    

 یہ خبریں جمعہ کو وفاقی وزیر برائے توانائی حماد اظہر کے ایک بیان کے بعد سامنے آئی ہیں جس میں کہا گیا تھا کہ ناشتے، دوپہر کے کھانے اور رات کے کھانے کے اوقات میں گیس کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔ 

 یہ بیان سینیٹ میں متوقع گیس بحران پر بحث کے دوران سامنے آیا جب حماد اظہر نے ہفتے میں صرف تین دن گیس کی فراہمی کی افواہوں کو مسترد کردیا۔

حماد اظہر نے کہا کہ پہلی بار، حکومت ہر دن تین بار گیس کی فراہمی کو یقینی بنانے کی کوشش کر رہی ہے۔ جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا لوگ گیس کی قلت کے دوران انڈا فرائی کر سکیں گے تو انہوں نے کہا کہ ہاں کر سکیں گے۔

 اس ہفتے کے شروع میں، نجی نیوز نے اطلاع دی تھی کہ پاکستان کی حکومت نے بجلی اور کھاد کے شعبوں کو گیس کی فراہمی جاری رکھنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ سردیوں کے موسم میں ملک میں گیس کی ایک بڑی کمی کے باعث گھریلو اور صنعتی صارفین کو قلت کا سامنا کرنا پڑے گا۔ 

یہ فیصلہ کابینہ کمیٹی برائے توانائی نے جمعرات کو ایک اجلاس کے دوران کیا جس کی صدارت وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی اسد عمر نے کی۔ 

 زرائع کے مطابق، کمیٹی نے فیصلہ کیا کہ بجلی اور کھاد کے پلانٹس سمیت “سرشار” صارفین کو گیس کی فراہمی مستحکم رہے گی۔ 

سوئی ناردرن گیس پائپ لائن لمیٹڈ سپلائی کے پاور پلانٹس، جو پنجاب اور کے پی کو گیس فراہم کرتے ہیں، 2021-22 کے دوران اضافی سپلائی کے ساتھ آر ایل این جی فراہم کی جائے گی۔ پاور سیکٹر کا خسارہ فرنس آئل کے ذریعے پورا کیا جائے گا۔ کیپٹیو پاور پلانٹس سے جو بھی گیس بچائی جائے گی اسے ایکسپورٹ پر مبنی صنعتوں کی طرف موڑ دیا جائے گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

cropped-urdu_khabar_logo.png

ہمارے نیوز لیٹر میں شامل ہوں۔

تازہ ترین مضامین، نوکریاں، مفت، تفریحی خبریں براہ راست اپنے ان باکس میں حاصل کریں۔

170000 سبسکرائبرز یہاں ہیں۔