مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    دہشتگردی کا کوئی مذہب نہیں، عمران خان کا کینڈین میڈیا کو انٹرویو

    وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کے روز انسانیت میں تفریق پیدا کرنے کے لئے نفرت انگیزی کی ویب سائٹوں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیا اور مسلم دنیا پر زور دیا کہ وہ اسلام کے بارے میں افہام و تفہیم کو بہتر بنانے کے لئے اپنا مقدمہ بین الاقوامی فورمز پر پیش کریں۔ 

    وزیر اعظم نے سی بی سی کے چیف سیاسی نمائندے روزیری بارٹن کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی انتہا پسندی اور اسلامی بنیاد پرست اصطلاحات کا استعمال سلمان رشدی کی کتاب کی اشاعت اور پھر نائن الیون واقعہ کے بعد شروع ہوا تھا۔ 

    وزیر اعظم نے مغربی دنیا میں اسلامو فوبیا کے سنگین مسئلے پر روشنی ڈالی جس کی وجہ سے اونٹاریو میں گذشتہ ہفتے پاکستان سے تعلق رکھنے والے ایک خاندان کے چار افراد کو قتل کیا گیا تھا۔

     کینیڈا کی پولیس کا کہنا ہے کہ اس خاندان کو اس لئے نشانہ بنایا گیا تھا کہ وہ مسلمان تھے۔ یہ خاندان 2007 میں پاکستان سے کینیڈا چلا گیا تھا۔ 

    یہ بھی پڑھیں | ہانیہ عامر کی نامناسب ویڈیو وائرل، ٹویٹر پر تنقید

     وزیر اعظم نے کہا کہ  دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں ہے کیونکہ ہر معاشرے میں انتہا پسند پائے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلامو فوبیا کی وجہ سے مغربی ممالک میں بسنے والے مسلمانوں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑا اور افہام و تفہیم میں بہتری لاتے ہوئے اس خلا کو بند کرنے پر زور دیا۔ 

     وزیر اعظم نے کہا کہ مغربی ممالک میں حالیہ گھریلو دہشت گردی نے آن لائن ریڈیکلائزیشن پر زیادہ سے زیادہ توجہ دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ اندوہناک واقعے کے بعد ، وزیر اعظم نے ٹویٹر پر کہا کہ انہیں لندن ، اونٹاریو میں ایک مسلمان پاکستانی نژاد کینیڈا والے خاندان کے قتل کی خبر سن کر بہت رنج ہوا ہے۔ 

    انہوں نے کہا کہ اس دہشت گردی سے مغربی ممالک میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا کا انکشاف ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی برادری کو اسلامو فوبیا کا مکمل طور پر مقابلہ کرنے کی ضرورت ہے۔ 

     وزیر اعظم نے انٹرویو لینے والے کو بتایا کہ انہوں نے یہ معاملہ اپنے کینیڈا کے ہم منصب جسٹن ٹروڈو کے ساتھ اٹھایا ہے ، اور انہیں ایک ایسے رہنما کے طور پر بیان کیا جو آن لائن نفرت اور اسلامو فوبیا سے لڑنے کی اہمیت کو سمجھتے ہیں۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x