او آئی سی اجلاس پاکستان کے لئے اتنا اہم کیوں ہے

سیاسی عدم استحکام اور معیشت کی زبوں حالی کے درمیان، پاکستان کے لئے 22 سے 23 مارچ تک اسلام آباد میں اسلامی تعاون تنظیم (OIC) کے وزرائے خارجہ کا اجلاس بہت اہمیت کا حامل ہے۔ پاکستان کے لئے او آئی سی اجلاس کی میزبانی پاکستان کے لئے بالیقین ایک فخر کی بات ہے۔

 تفصیلات کے مطابق او آئی سی کا 48 واں سربراہی اجلاس 22 اور 23 مارچ کو اس موضوع کے تحت منعقد ہوگا: “اتحاد، انصاف اور ترقی کے لیے شراکت داری کی تعمیر”۔

 ٹوئٹر پر دفتر خارجہ کے ترجمان عاصم افتخار نے کہا کہ یہ سیشن پاکستان کے یوم آزادی کی 75 ویں سالگرہ کی تقریبات کے موقع پر ہوگا۔

نجی نیوز کی رپورٹ کے مطابق، ایک روز قبل وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا تھا کہ او آئی سی کونسل آف وزرائے خارجہ (او آئی سی-سی ایف ایم) کا اجلاس ملک میں ایک بین الاقوامی تقریب ہے اور کوئی بھی اس میں رکاوٹ پیدا کرنے کی جرات نہیں کر سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | چوہدری شجاعت نے اپوزیشن کی جانب سے ہارس ٹریڈنگ کا انکار کر دیا 

 ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے اپوزیشن کو چیلنج کیا کہ وہ اجلاس کو روکنے کی ہمت تو کرے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ریاست اسے مکمل تحفظ فراہم کرے گی۔ انہوں نے بلاول بھٹو زرداری کی جانب سے قومی اسمبلی میں دھرنا دینے اور دارالحکومت میں او آئی سی کونسل آف ایف ایم کے اجلاس کو روکنے کے انتباہ پر سخت ردعمل کا اظہار کیا۔ پی ٹی آئی کے مرکزی سیکرٹری جنرل اور وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر نے بلاول بھٹو زرداری کے او آئی سی کانفرنس کے خلاف بیان پر سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے الزام لگایا کہ وہ ہمیشہ اہل اسلام کے دفاع میں بات کرنے سے ڈرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم جانتے تھے کہ آپ ہمیشہ اسلام اور ان کے حقوق کے دفاع میں بات کرنے سے ڈرتے ہیں، لیکن ہمیں امید نہیں تھی کہ آپ او آئی سی اجلاس میں خلل ڈالنے کی کھلی دھمکی دے کر اس طرح کے مسلم مخالف جذبات کا اظہار کریں گے۔ 

پاکستان کے لئے او آئی سی کا اجلاس اس لئے بھی اہمیت کا حامل ہے کہ اس میں بالخصوص مسئلہ افغانستان پر دوبارہ بات چیت ہو گی اور افغانیوں کو بحران سے نکالنے پر بات ہو گی۔ پاکستان کے لئے افغانستان کا امن بہت اہمیت کا حامل رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔