مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

امریکہ اور اقوام متحدہ کی افغانستان میں سول وار کی وارننگ

اقوام متحدہ اور ایک اعلیٰ امریکی جنرل نے افغانستان میں ایک نئی خانہ جنگی یا سول وار کے خدشات کی وارننگ ہے اور طالبان اور دیگر تمام فریقوں پر زور دیا ہے کہ وہ جانوں کے تحفظ کے لیے انتہائی تحمل کا مظاہرہ کریں۔ 

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتریس نے افغانستان میں تشدد کے خاتمے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ طالبان نے اقتدار پر قبضہ کر لیا ہے۔ انہوں نے ایک رپورٹ میں کہا کہ میں تشدد کے فوری خاتمے کا مطالبہ کرتا ہوں تاکہ تمام افغانوں کی حفاظت ، سلامتی اور حقوق کا احترام کیا جائے اور افغانستان کی بین الاقوامی ذمہ داریوں پر عمل کیا جائے ، بشمول وہ تمام بین الاقوامی معاہدے جن میں یہ ایک فریق ہیں۔

 انہوں نے کہا کہ میں طالبان اور دیگر تمام فریقوں پر زور دیتا ہوں کہ وہ جانوں کے تحفظ اور انسانی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے انتہائی تحمل کا مظاہرہ کریں۔

یہ بھی پڑھیں | آزادی کے لیڈر سید علی گیلانی کو دفن کیا گیا۔

  افغانستان میں اقوام متحدہ کے سیاسی مشن کا مینڈیٹ 17 ستمبر کو ختم ہونے والا ہے جس حوالے سے ایک رپورٹ مرتب کی گئی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اقوام متحدہ کی امدادی کوششیں صرف 38 فیصد آبادی کے لیے مدد فراہم کر سکتی ہیں ، لہذا عالمی ادارے کو فوری طور پر تقریبا 800 ملین ڈالر کی ضرورت ہے۔ 

تیرا ستمبر کو جنیوا میں افغانستان کے لیے بین الاقوامی امدادی کانفرنس بلانے والے جنرل انتونیو گوتریس نے کہا ہے کہ میں تمام عطیہ دہندگان سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ دوبارہ امداد کریں تاکہ زندگی بچانے والے کام کو فوری طور پر بڑھایا جائے ، وقت پر پہنچایا جائے اور مصیبت کو کم کیا جائے۔

 انہوں نے ممالک پر زور دیا کہ وہ افغان مہاجرین کو پناہ دیں اور ان کی ملک بدری سے گریز کریں۔ دریں اثنا ، ایک اعلیٰ امریکی جنرل نے ہفتے کے روز کہا کہ افغانستان میں ممکنہ طور پر خانہ جنگی کا آغاز ہو سکتا ہے اور خبردار کیا کہ ان حالات سے ملک میں دہشت گرد گروہوں کا دوبارہ جنم ہو سکتا ہے۔ 

جوائنٹ چیفس آف سٹاف کے چیئرمین جنرل مارک ملی نے بتایا کہ میرا فوجی اندازہ یہ ہے کہ حالات خانہ جنگی کی صورت اختیار کر سکتے ہیں۔ انہوں نے سوال کیا کہ کیا طالبان – جنہوں نے ابھی تک حکومت کا اعلان نہیں کیا ہے – کیا وہ طاقت کو مستحکم کرنے اور موثر حکمرانی قائم کرنے کے قابل ہوں گے؟ میرے خیال میں وسیع تر خانہ جنگی کا کم از کم بہت زیادہ امکان ہے اور اس کے نتیجے میں ایسے حالات پیدا ہوں گے جو حقیقت میں القاعدہ کی تشکیل نو یا داعش یا دیگر دہشت گرد گروہوں کی ترقی کا باعث بن سکتے ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔