مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

افغان صدر اشرف غنی تاجکستان کیسے فرار ہوئے؟

طالبان جنگجو کابل میں داخل ہوئے اور صدر اشرف غنی نے یہ کہہ کر افغانستان چھوڑ دیا کہ وہ خونریزی سے بچنا چاہتے ہیں۔

 تفصیلات کے مطابق کابل میں طالبان کے داخلے کے بعد اپنی واضح شکست دیکھ کر اشرف غنی نے تاجکستان کی راہ فرار اختیار کی۔

یاد رہے کہ طالبان نے اتوار کے روز دارالحکومت بھر میں مظاہرہ کیا اور صدارتی محل کا کنٹرول سنبھال لیا۔

یہ بھی پڑھیں | کشمیری پریمیئر لیگ: باگ سٹائل آج کوٹلی شیروں کا سامنا کریں گے

 الجزیرہ نے درجنوں مسلح جنگجوؤں کے ساتھ محل میں طالبان کمانڈروں کی خصوصی فوٹیج حاصل کی۔ طالبان نے یہ بھی کہا کہ اس نے دارالحکومت کے مضافاتی علاقوں کے بیشتر اضلاع کا کنٹرول سنبھال لیا ہے۔ شہر خوف و ہراس کی لپیٹ میں تھا ، امریکی سفارت خانے سے اہلکاروں کو نکالنے کے لیے دن بھر ہیلی کاپٹر دوڑتے رہے۔ 

کمپاؤنڈ کے قریب عملے نے اہم دستاویزات کو آگ لگا دی تا کہ اہم ریکارڈ طالبان کے ہاتھ نا آئے اور امریکی جھنڈا نیچے کر دیا گیا۔ کئی دوسرے مغربی مشنوں نے بھی اپنے لوگوں کو واپس ملک بنانے کی تیاریاں شروع کر دی ہیں۔

  اتوار کو طالبان کے بند ہوتے ہی صدر اشرف غنی ملک سے باہر چلے گئے۔ افغان قومی مصالحتی کونسل کے سربراہ عبداللہ عبداللہ نے کہا کہ افغانستان کے سابق صدر نے اس مشکل صورتحال میں ملک چھوڑ کر افغانستان چھوڑ دیا۔

تاجکستان فرار ہونے کے بعد اشرف غنی نے فیس بک پر پوسٹ کیا کہ انہوں نے دارالحکومت میں خون خرابے سے بچنے کے لیے ملک چھوڑنے کا انتخاب کیا ہے۔  میڈیا نے بعد میں اطلاع دی کہ اشرف غنی تاجکستان کے لیے روانہ ہو گئے۔ 

سابق صدر اشرف غنی نے کہا کہ ان کا ماننا ہے کہ اگر وہ پیچھے نا ہٹتے تو ان گنت محب وطن شہید ہوتے اور کابل شہر تباہ ہوتا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔